Book - حدیث 713

كِتَابُ الْأَذَانِ وَالسُّنَّةُ فِيهِ بَابُ السُّنَّةِ فِي الْأَذَانِ حسن حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى حَدَّثَنَا أَبُو دَاوُدَ حَدَّثَنَا شَرِيكٌ عَنْ سِمَاكِ بْنِ حَرْبٍ عَنْ جَابِرِ بْنِ سَمُرَةَ قَالَ كَانَ بِلَالٌ لَا يُؤَخِّرُ الْأَذَانَ عَنْ الْوَقْتِ وَرُبَّمَا أَخَّرَ الْإِقَامَةَ شَيْئًا

ترجمہ Book - حدیث 713

کتاب: آذان کے مسائل اور اس کا طریقہ باب: اذان کا طریقہ سیدنا جابر بن سمرہ ؓ سے روایت ہے، انہوں نے فرمایا: سیدنا بلال ؓ اذان کو وقت سے مؤخر نہیں کرتے تھے ،البتہ اقامت میں بعض اوقات تاخیر کر دیتے تھے۔ 1۔ہمارے فاضل محقق نے مذکورہ روایت کو سنداًضعیف قرار دیا جبکہ دیگر محققین نے شواہد کی وجہ سے احسن قرار دیا ہے۔تفصیل کے لیے دیکھیے: ( الموسوعة الحديثيه مسند الامام احمد بن حنبل :٣٤/٤٣٥ حديث :٣-٨٤٩)وارواء الغليل رقم:٢٢٧) لہذا شواہد کی بناء پر یہ حدیث قابل حجت اور قابل عمل ہے۔ 2۔اذان اس چیز کا اعلان ہے کہ نماز کا وقت شروع ہوگیا ہے۔اس لیے اذان اول وقت دینی چاہیے جب کہ اقامت نماز شروع ہونے کی اطلاع ہے اور حضرت بلال رضی اللہ عنہ اس وقت اقامت کہتے تھے جب رسول اللہ ﷺ تشریف لے آتے ۔ 3۔اگر امام کو نماز پڑھانے کے لیے آنے میں مقرر وقت سے کچھ تاخیر ہوجائے تو امام کا انتظار کرنا چاہیے ۔جلدی مچانا اور فوراً کسی دوسرے آدمی کو آگے کردینا درست نہیں۔ہاں اگر معلوم ہو کہ امام صاحب موجود نہیں اور وہ نماز پڑھانے کے لیے مسجد میں نہیں آئیں گے پھر کسی اور شخص کے پیچھے نماز پڑھ سکتے ہیں۔