Book - حدیث 599

کِتَابُ التَّيَمَُ بَابُ تَحْتَ كُلِّ شَعَرَةٍ جَنَابَةٌ ضعیف حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا الْأَسْوَدُ بْنُ عَامِرٍ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ عَنْ عَطَاءِ بْنِ السَّائِبِ عَنْ زَاذَانَ عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ مَنْ تَرَكَ مَوْضِعَ شَعَرَةٍ مِنْ جَسَدِهِ مِنْ جَنَابَةٍ لَمْ يَغْسِلْهَا فُعِلَ بِهِ كَذَا وَكَذَا مِنْ النَّارِ قَالَ عَلِيٌّ فَمِنْ ثَمَّ عَادَيْتُ شَعَرِي وَكَانَ يَجُزُّهُ

ترجمہ Book - حدیث 599

کتاب: تیمم کے احکام ومسائل باب: ہر ہر بال کے نیچے جنابت ہے سیدنا علی ؓ سے روایت ہے، نبی ﷺ نے فرمایا: ’’جس نے غسل جنابت میں جسم کی بال برابر جگہ بھی چھوڑ دی اور نہ دھویا، اسے آگ کا اتنا اتنا( بہت زیادہ) عذاب دیا جائے گا۔ ‘‘ سیدنا علی ؓ نے فرمایا: اسی وجہ سے میں نے اپنے بالوں سے دشمنی اختیار کر لی۔ آپ سر کے بال کاٹ دیا کرتے تھے۔ سر کے بال رکھنا اگرچہ افضل ہے بشرطیکہ انگریزی طریقے سے نہ ہوں بلکہ پٹے بال ہوں’’تاہم بال منڈادیے بھی جائز ہیں۔