Book - حدیث 4330

كِتَابُ الزُّهْدِ بَابُ صِفَةِ الْجَنَّةِ صحیح حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ حَدَّثَنَا زَكَرِيَّا بْنُ مَنْظُورٍ حَدَّثَنَا أَبُو حَازِمٍ عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مَوْضِعُ سَوْطٍ فِي الْجَنَّةِ خَيْرٌ مِنْ الدُّنْيَا وَمَا فِيهَا

ترجمہ Book - حدیث 4330

کتاب: زہد سے متعلق احکام و مسائل باب: جنت کی کیفیات حضرت سہل بن سعد ساعدی ؓ سے روایت ہے۔رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:جنت میں ایک کوڑا رکھنے کی جگہ دنیا ومافیھا سے بہتر ہے۔ ۱ گھوڑے کو چلانے کے لیے سوار جو چابک اور کوڑا استعمال کرتا ھے۔ وہ زمین پہ رکھا جاتا ھے تو بہت کم جگہ گھیرتا ھے۔دنیا میں اتنی سی زمین کی کوئی اہمیت نہیں لیکن جنت کا اتنا سا حصہ بھی بے انتہا قیمتی ھے۔اس کی وجہ یہ ھے کہ جنت کی نعمتیں ابدی ھے جبکہ دنیا کی بڑی سے بڑی دولت بھی ختم ھونے والی ھے ۔ ۲ کرہ ارض کا رقبہ کروڑوں مربع میل ھے۔ انسان کے لیے اس کی مٹی بھی قیمتی ھے ہم زمین کا ایک چھوٹا سا خالی ٹکڑا لاکھوں روپے دے کر خریدتے ھے پھر اس پر مزید اخراجات کے بعدمکان تعمیر ھوتا ھے ۔زمین کے اندر بہت سی اقسام کی معدنیات کے پیش بہا خزانے موجود ہیں سونے کی ایک کان یا پیٹرول کے ایک کنویں کی قیمت کا اندازہ لگانا مشکل ھے جبکہ زمین میں سونے سے زیادہ قیمتی معدنیات کے عظیم ذخائر موجود ہیں۔ زمین میں موجود فصلوں درختوں جڑی بوٹیوں مویشیوں جنگلی جانوروں وغیرہ میں سے کسی ایک کی کل مقدار کی قیمت کا اندازہ لگانا چاہیں تو حساب ممکن نہیں ۔اسکے علاوہ جو سمندر میں حیوانی نباتی اور معدنی دولت موجود ھے وہ خشکی کے خزانوں سے کہیں زیادہ ھے۔ان تمام دولتوں کی مجموعی مقدار کسقدر ھوسکتی ھے ؟انسان اسکا سادہ سا اندازہ لگانے سے بھی عاجز ھے۔لیکن یہ سب خزانے مل کر بھی جنت کے چند انچ کے ٹکڑے کی قیمت بھی نہیں بن سکتے۔ ۳ کم سے کم درجے کے جنتی کو جنت میں دنیا کی بڑی سے بڑی سلطنت سے کئی گنا زیادہ جگہ ملے گی۔ اس میں طرح طرح کے محلات بھی ھونگے۔ہر قسم کے پھل اور میوے بھی ھونگے۔اور بے شمار نعمتیں بھی ھونگی۔کتنا کم عقل ھے انسان کہ دنیا کے معمولی سے مفاد پر اتنی عظیم دولت عزت عظمت اور شان قربان کردیتا ھے۔