Book - حدیث 4285

كِتَابُ الزُّهْدِ بَابُ صِفَةِ أُمَّةِ مُحَمَّدٍﷺ صحیح حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مُصْعَبٍ عَنْ الْأَوْزَاعِيِّ عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ عَنْ هِلَالِ بْنِ أَبِي مَيْمُونَةَ عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ عَنْ رِفَاعَةَ الْجُهَنِيِّ قَالَ صَدَرْنَا مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ وَالَّذِي نَفْسُ مُحَمَّدٍ بِيَدِهِ مَا مِنْ عَبْدٍ يُؤْمِنُ ثُمَّ يُسَدِّدُ إِلَّا سُلِكَ بِهِ فِي الْجَنَّةِ وَأَرْجُو أَلَّا يَدْخُلُوهَا حَتَّى تَبَوَّءُوا أَنْتُمْ وَمَنْ صَلَحَ مِنْ ذَرَارِيِّكُمْ مَسَاكِنَ فِي الْجَنَّةِ وَلَقَدْ وَعَدَنِي رَبِّي عَزَّ وَجَلَّ أَنْ يُدْخِلَ الْجَنَّةَ مِنْ أُمَّتِي سَبْعِينَ أَلْفًا بِغَيْرِ حِسَابِ

ترجمہ Book - حدیث 4285

کتاب: زہد سے متعلق احکام و مسائل باب: امت محمد ﷺ کی صفا ت حضرت رفاعہ (بن عرابہ) جھنی رضی للہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے۔انھوں نے فرمایا :ہم لوگ رسول اللہ ﷺ کے ہمراہ سفر سے و اپس آئے تو آپ ﷺ نے فرمایا قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں محمد (ﷺ) کی جان ہے۔جو آدمی ایمان لائے۔ پھرسیدھی راہ پر قائم رہے۔ اسے ضرور جنت میں پہنچایا جائےگا۔ اور مجھ اُمید ہے۔کہ وہ لوگ(دوسری اُمتوں ک جنتی)اس وقت تک داخل نہیں ہوں گے۔جب تک تم اور تمھاری نیک اولادیں۔جنت کےگھروں میں نہ پہنچ جایئں اور میرے رب عزوجل نے مجھ سے وعد ہ کیا ہے۔کہ میری اُمت میں سے ستر ہزار افراد کو بغیر حساب کے جنت میں داخل کرے گا 1۔امت محمدیہ کے مومن دوسری امتوں کے مومنوں سے پہلے جنت میں داخل ہوں گے۔2۔جنت میں داخلے کے لئے ایمان کے ساتھ ساتھ اس کے تقاضے پورے کرنا سیدھی راہ پر قائم رہنا اور گناہوں سےبچنا بھی ضروری ہے 3۔کوئی شخص اس لئے جنت میں داخلے کا مستحق نہیں ہوجاتا کہ اس کے والدین نیک ہیں۔بلکہ خود بھی نیک ہونا ضروری ہے۔4۔بلند درجات والے مومن حساب کتاب کے بغیر جنت میں پہنچا دیئے جایئں گے۔5۔ ایک حدیث میں بغیر حساب کے جنت میں جانے والے ستر ہزار مومنوں کی یہ خوبیاں کی گئی ہیں۔ وہ (آگ کے ساتھ) داغ نہیں لگواتے جھاڑ پھونک نہیں کرواتے بدشگونی نہیں لیتے اور اپنے رب پر توکل کرتے ہیں۔ (صحیح البخاری‘الرقاق‘باب یدخل الجنۃ سبعون الفا بغیر حساب‘حدیث:6541)