Book - حدیث 4091

كِتَابُ الْفِتَنِ بَابُ الْمَلَاحِمِ صحیح حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ عَلِيٍّ عَنْ زَائِدَةَ عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ عُمَيْرٍ عَنْ جَابِرِ بْنِ سَمُرَةَ عَنْ نَافِعِ بْنِ عُتْبَةَ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ سَتُقَاتِلُونَ جَزِيرَةَ الْعَرَبِ فَيَفْتَحُهَا اللَّهُ ثُمَّ تُقَاتِلُونَ الرُّومَ فَيَفْتَحُهَا اللَّهُ ثُمَّ تُقَاتِلُونَ الدَّجَّالَ فَيَفْتَحُهَا اللَّهُ قَالَ جَابِرٌ فَمَا يَخْرُجُ الدَّجَّالُ حَتَّى تُفْتَحَ الرُّومُ

ترجمہ Book - حدیث 4091

کتاب: فتنہ و آزمائش سے متعلق احکام و مسائل باب: بڑی بڑی جنگوں کابیان حضرت نافع بن عتبہ بن ابو وقاص ؓ سے روایت ہے ، نبی ﷺ نے فرمایا :‘‘ تم لوگ جزیرہ عرب والوں سے جنگ کروگے ، اللہ اسے فتح کردے گا ۔ پھر تم روم سے جنگ کروگے ، اللہ اسے فتح کردے گا۔ پھر تم روم سے جنگ کروگے ، اللہ تعالی اسے بھی فتح کر دے گا۔ پھرتم دجال سے جنگ کروگے ، اللہ تمہیں اس پر بھی فتح دے گا’’۔ حضرت جابر ؓ بیان کرتے ہیں :‘‘ دجال ظاہر نہیں ہوگا جب تک روم فتح نہ ہو 1۔ جزیرہ عرب( موجودہ سعودی عربیمنحضر موتقطرکویت اور کچھ عراق)نبی ﷺ کے دور میں فتح ہوگیا تھا۔خؒافت راشدہ کے دور میں روم او ایران سے جنگیں ہوئیں۔ اس وقت روم عیسائیوں کا اہم علاقہ ہے۔یورپ کا سارا علاقہ تہذیبی طور پر اس کے تابع ہےتاہم اب مسلمانوں کے علاقے آزادی کی کوشش کر رہے ہیں۔ 3۔ اس حدیث میں یورپ پر اسلام کے غلبہ کی پیشن گوئی ہے۔اس کے بعد دجال ظاہر ہوگا۔اس کا فتنہ جب عروج پر ہوگا تو حضرت عیسیٰ علیہ السلام نازل ہونگے۔تب پوری دنیا میں اسلام غالب آجائے گا۔ 4۔ ان واقعات کی پیشگی خبر دینے کا مقصڈ یہ ہے کہ ان مواقع پر مسلمان حق کا ساھ دیں اور باطل کے ظاہری غلبے سے مرعوب نہ ہوں۔