Book - حدیث 329

كِتَابُ الطَّهَارَةِ وَسُنَنِهَا بَابُ النَّهْيِ عَنِ الْخَلَاءَ عَلَى قَارِعَةِ الطَّرِيقِ حسن- دون " والصلاة عليها " - حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ أَبِي سَلَمَةَ عَنْ زُهَيْرٍ قَالَ قَالَ سَالِمٌ سَمِعْتُ الْحَسَنَ يَقُولُ حَدَّثَنَا جَابِرُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِيَّاكُمْ وَالتَّعْرِيسَ عَلَى جَوَادِّ الطَّرِيقِ وَالصَّلَاةَ عَلَيْهَا فَإِنَّهَا مَأْوَى الْحَيَّاتِ وَالسِّبَاعِ وَقَضَاءَ الْحَاجَةِ عَلَيْهَا فَإِنَّهَا مِنْ الْمَلَاعِنِ

ترجمہ Book - حدیث 329

کتاب: طہارت کے مسائل اور اس کی سنتیں باب: راستے پر قضاۓحاجت کی ممانعت کا بیان سیدنا جابر بن عبداللہ ؓ سے روایت ہے ، رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ’’ راستے کے درمیان ( رات کو آرام کرنے اور سونے کے لیے نہ ٹھہراؤ اور وہاں نماز نہ پڑھو کیوں یہ سانپوں اور درندوں کا ٹھکانا ہے ، اور وہاں قضائے حاجت نہ کرو کیوں کہ یہ لعنت کا باعث ہے۔‘‘ رات کو جب راستے پر انسانوں کی آمدرفت رک جاتی ہےتو موذی جانور اور حشرات اپنے ٹھکانوں سے نکل آتے ہیںاور ان راستوں سے گزرتے ہیں،اس لیے اگر کوئی مسافر لیٹ کرسورہاہوتوممکن ہے کوئی سانپ بچھووغیرہ اسے نقصان پہنچائے۔ 2۔اس حدیث سے بھی راستے میں قضائے حاجت کرنے کی ممانعت ثابت ہوتی ہے۔ 3۔بعض محققین نے (والصلاة عليها)کے الفاظ کے علاوہ اسے حسن قراردیاہے۔تفصیل کے لیے دیکھیے: ( الصحيحة‘حدیث:2433)