Book - حدیث 2881

كِتَابُ الْجِهَادِ بَابُ قِسْمَةِ الْخُمُسِ صحیح حَدَّثَنَا يُونُسُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى حَدَّثَنَا أَيُّوبُ بْنُ سُوَيْدٍ عَنْ يُونُسَ بْنِ يَزِيدَ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ أَنَّ جُبَيْرَ بْنَ مُطْعِمٍ أَخْبَرَهُ أَنَّهُ جَاءَ هُوَ وَعُثْمَانُ بْنُ عَفَّانَ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُكَلِّمَانِهِ فِيمَا قَسَمَ مِنْ خُمُسِ خَيْبَرَ لِبَنِي هَاشِمٍ وَبَنِي الْمُطَّلِبِ فَقَالَا قَسَمْتَ لِإِخْوَانِنَا بَنِي هَاشِمٍ وَبَنِي الْمُطَّلِبِ وَقَرَابَتُنَا وَاحِدَةٌ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِنَّمَا أَرَى بَنِي هَاشِمٍ وَبَنِي الْمُطَّلِبِ شَيْئًا وَاحِدًا

ترجمہ Book - حدیث 2881

کتاب: جہاد سے متعلق احکام ومسائل باب: خمس کی تقسیم حضرت جبیر بن مطعم ؓ سے روایت ہے کہ وہ حضرت عثمان رسول اللہﷺ کی خدمت میں حاضر ہوکر خیبر کے خمس میں سےبنو ہاشم اور بنو مطلب کو ملنے والے حصے کے بارے بات چیت کرنے لگے۔ان دونوں نے کہا:آپ ہمارے بھائیوں(یعنی)بنو ہاشم اور بنو مطلب کوحصہ عطا فرمایا(اور ہم بنوعبدشمس کونہین دیا)حالانکہ ہماری قرابت ایک ہی درجےکی ہے۔رسول اللہﷺ نے فرمایا میں بنوہاشم اور بنومطلب کوایک چیز سمجھتا ہوں۔ 1۔مال غنیمت کے پانچ حصے مجاہدین میں تقسیم کئے جاتے ہیں۔ایک حصہ بیت المال کا ہوتا ہے۔بیت المال کا یہ حصہ (خمس) جہاں مفاد عامہ کے معاملات پر خرچ کیا جاتا ہے۔وہاں اس میں سے ایک حصہ رسول اللہ ﷺ کے رشتہ داروں کا ہے جنھیں زکوۃوصدقات لینا حرام ہے۔ اللہ تعالی نے فرمایا (واعلموا انما غنمتم من شئي فان لله خمسه و للرسولولذي القربي واليتمي والمسكين وابن السبيل) (الانفال ٤١/٨) جان لو کہ تم جس قسم کی جو کچھ غنیمت حاصل کرو اس میں پانچواں حصہ اللہ کا رسول کا (رسول کے)قرابت داروں کا یتیموں کا مسکینوں کااور مسافروں کا ہے۔ 2۔ہاشم مطلب عبد شمس اور نوفل سب عبد مناف کے بیٹے تھے۔لیکن رسول اللہﷺ کے قرابت داروں کا حصہ صرف ہاشم اور مطلب کی اولاد کو ملتا ہے۔انھی پر زکاۃ حرام ہے۔عبد شمس اور نوفل کی اولاد اس میں شامل نہیں۔ 3۔حضرت جبیر بن مطعم رضی اللہ عنہ نوفل کی اولاد میں سے تھےاور حضرت عثمان رضی اللہ عنہ عبد شمس کی اولاد میں سے تھے۔انھیں خمس میں سے حصہ نہیں ملا ۔بنو ہاشم اور بنو مطلب کے ایک ہونے کی مختلف انداز سے وضاحت کی گئی ہے۔زیادہ صحیح بات یہ معلوم ہوتی ہے کہ بنو مطلب نے اسلام سے پہلے بھی بنو ہاشم کا ساتھ دیا تھااور شعب ابی طالب میں میں بنو ہاشم کے ساتھ رہے اور تکلیفیں برداشت کیں۔جب کہ بنو نوفل اور بنو عبد شمس نے بائیکاٹ کرنے والوں کا ساتھ دیا اس لیے ان کا بائیکاٹ نہیں کیا گیا چنانچہ خمس کے استحقاق میں بھی بنو ہاشم اور بنو مطلب کو برابر رکھا گیا ہے۔واللہ اعلم۔