Book - حدیث 2759

كِتَابُ الْجِهَادِ بَابُ مَنْ جَهَّزَ غَازِيًا صحیح حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا عَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ أَبِي سُلَيْمَانَ عَنْ عَطَاءٍ عَنْ زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ الْجُهَنِيِّ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مَنْ جَهَّزَ غَازِيًا فِي سَبِيلِ اللَّهِ كَانَ لَهُ مِثْلُ أَجْرِهِ مِنْ غَيْرِ أَنْ يَنْقُصَ مِنْ أَجْرِ الْغَازِي شَيْئًا

ترجمہ Book - حدیث 2759

کتاب: جہاد سے متعلق احکام ومسائل باب: مجاہد کو سا ما ن مہیا کرنا حضرت زیدبن خالد جہنی ؓ سے روایت ہے ، رسول اللہﷺ نے فرمایا: جس نے اللہ کی راہ میں جنگ کرنے والے کو سامان مہیا کیا، اسے بھی اس (مجاہد) کے برابر ثواب ملے گا جب کہ مجاہد کے ثواب میں کوئی کمی نہیں ہوگی۔ 1۔نیکی کے کسی کام میں تعاون کرنااس نیکی میں شریک ہونے کے برابر ہے۔ 2۔جہاد میں مالی تعاون بھی جہاد ہے۔ 3۔جس نیکی میں ایک سے زیادہ افراد شریک ہوں ان سب کو پورا ثواب ملتا ہے۔کسی کے حصے کا ثواب کم کرکے دوسرے کو نہیں دیا جاتا۔ 4۔نیکی کی توفیق بھی اللہ تعالی کا احسان ہے اور اس پر ثواب ملنا اللہ تعالی کا مزید احسان ہے۔