Book - حدیث 2378

كِتَابُ الْهِبَاتِ بَابُ مَنْ أَعْطَى وَلَدَهُ ثُمَّ رَجَعَ فِيهِ حسن صحیح حَدَّثَنَا جَمِيلُ بْنُ الْحَسَنِ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْأَعْلَى حَدَّثَنَا سَعِيدٌ عَنْ عَامِرٍ الْأَحْوَلِ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ عَنْ أَبِيهِ عَنْ جَدِّهِ أَنَّ نَبِيَّ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ لَا يَرْجِعْ أَحَدُكُمْ فِي هِبَتِهِ إِلَّا الْوَالِدَ مِنْ وَلَدِهِ

ترجمہ Book - حدیث 2378

کتاب: ہبہ سے متعلق احکام ومسائل باب: اولاد کو کچھ دے کر واپس لینا ( جائز ہے ) حضرت عمرو بن شعیب ؓ اپنے والد سے، وہ اپنے دادا ( حضرت عبداللہ بن عمرو بن عاص ؓ) سے روایت کرتے ہیں کہ اللہ کے نبی ﷺ نے فرمایا: کوئی شخص اپنے ہبہ سے رجوع نہ کرے مگر والد اپنی اولاد سے (واپس لے سکتا ہے)۔ 1۔ کسی کوتحفے کےطورپرکوئی چیز دےکرواپس لینا جائزنہیں خواہ وہ تحفہ معمولی ہویاقیمتی ۔ 2۔ والد اپنی اولاد کودی ہوئی چیز واپس لےسکتاہے۔ 3۔ والدہ کابھی یہی حکم ہے۔ 4۔بعض علماء نےنانا‘نانی اوردادا‘دادی کوبھی اسی حکم میں شامل کیاہے۔واللہ اعلم ‘