Book - حدیث 2306

كِتَابُ التِّجَارَاتِ بَابُ اتِّخَاذِ الْمَاشِيَةِ صحیح حَدَّثَنَا عِصْمَةُ بْنُ الْفَضْلِ النَّيْسَابُورِيُّ وَمُحَمَّدُ بْنُ فِرَاسٍ أَبُو هُرَيْرَةَ الصَّيْرَفِيُّ قَالَا حَدَّثَنَا حَرَمِيُّ بْنُ عُمَارَةَ حَدَّثَنَا زَرْبِيٌّ إِمَامُ مَسْجِدِ هِشَامِ بْنِ حَسَّانَ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سِيرِينَ عَنْ ابْنِ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الشَّاةُ مِنْ دَوَابِّ الْجَنَّةِ

ترجمہ Book - حدیث 2306

کتاب: تجارت سے متعلق احکام ومسائل باب: مویشی پالنا حضرت عبداللہ بن عمر ؓ سے روایت ہے، رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: بکری جنت کے جانوروں میں سے ہے۔ (1) اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ حلال جانور ہے ۔ اس کا گوشت اور دودھ مفید ہے ‘ اس لیے بکریاں پالنا اور ان کا گوشت اور دودھ استعمال کرنا چاہیے ۔ (2) اس کا یہ مطلب بھی ہو سکتا ہے کہ یہ ان جانوروں میں سے ہے جنہیں اللہ کی راہ میں ذبح کیا جاتا ہے اور عید کے موقع پر ان کی قربانی دی جاتی ہے جس کی وجہ سے جنت حاصل ہوتی ہے ۔ (3) اس حدیث کی سند میں ایک راوی ’’زربی بن عبد اللہ ‘‘ ضعیف ہے ‘ جس کی وجہ سے ہمارے فاضل محقق نے اسے سنداً ضعیف قرار دیا ہے جب کہ علامہ البانی ﷫ نے اسے الصحیحہ میں صحیح قرار دیا ہے ۔ تفصیل کےلیے دیکھیے : (الصحيحة ، رقم : 1128)