Book - حدیث 1896

كِتَابُ النِّكَاحِ بَابُ إِعْلَانِ النِّكَاحِ حسن حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ رَافِعٍ قَالَ: حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ، عَنْ أَبِي بَلْجٍ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ حَاطِبٍ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: «فَصْلٌ بَيْنَ الْحَلَالِ وَالْحَرَامِ، الدُّفُّ وَالصَّوْتُ فِي النِّكَاحِ»

ترجمہ Book - حدیث 1896

کتاب: نکاح سے متعلق احکام و مسائل باب: نکاح کا اعلان کرنا حضرت محمد بن حاطب ؓ سے روایت ہے، رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: حلال اور حرام میں فرق نکاح کے موقع پر دَف اور بلند آواز کا ہے۔ 1۔ازدواجی تعلقات قائم کرنے کا شرعی طریقہ نکاح کا ہے ۔ اس میں عام لوگوں کو معلوم ہوتا ہے کہ فلاں کا فلاں سے نکاح ہوا ہے جب کہ ناجائز تعلقات خفیہ طور پر قائم کیے جاتے ہیں اور کوشش کی جاتی ہے کہ لوگوں کو ان تعلقات کا علم نہ ہونے پائے ۔ نکاح میں گواہ مقرر کرنے کا یہی مقصد ہے ۔ شادی کے موقع پر دف بجانے کا بھی یہی مقصد ہے کہ سب لوگوں کو شادی کا علم ہو جائے ۔ اس موقع پر گیت وغیرہ بھی گائے جا سکتے ہیں بشرطیکہ ان کے الفاظ شریعت کی تعلیمات کے منافی نہ ہوں ۔ اور گانے والیاں نابالغ بچیاں ہوں ۔ خوشی کے اسی انداز سے اظہار عید کے ایام میں بھی جائز ہے ۔ دف ڈھول سے ملتی جلتی ایک چیز ہے ۔ جس میں صرف ایک طرف چمڑا لگا ہوتا ہے جبکہ ڈھول میں دونوں طرف چمڑا لگا ہوتا ہے ، اس لیے دف کی آواز اتنی زیادہ بلند اور خوش کن نہیں ہوتی ۔ بعض لوگ دف کے جواز سے ہر قسم کے راگ رنگ کا جواز ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں ۔ یہ استدلال درست نہیں ۔ رسول اللہ ﷺ نے دف کی اجازت دینے کے باوجود خود اس میں دلچسپی نہیں لی ۔ ( صحیح البخاری ، العیدین ، باب الحراب والدرق یوم العید ، حدیث : 949)