Book - حدیث 1647

كِتَاب الصِّيَامِ بَابُ مَا جَاءَ فِي صِيَامِ يَوْمِ الشَّكِّ ضعیف حَدَّثَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ الْوَلِيدِ الدِّمَشْقِيُّ حَدَّثَنَا مَرْوَانُ بْنُ مُحَمَّدٍ حَدَّثَنَا الْهَيْثَمُ بْنُ حُمَيْدٍ حَدَّثَنَا الْعَلَاءُ بْنُ الْحَارِثِ عَنْ الْقَاسِمِ أَبِي عَبْدِ الرَّحْمَنِ أَنَّهُ سَمِعَ مُعَاوِيَةَ بْنَ أَبِي سُفْيَانَ عَلَى الْمِنْبَرِ يَقُولُ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ عَلَى الْمِنْبَرِ قَبْلَ شَهْرِ رَمَضَانَ الصِّيَامُ يَوْمَ كَذَا وَكَذَا وَنَحْنُ مُتَقَدِّمُونَ فَمَنْ شَاءَ فَلْيَتَقَدَّمْ وَمَنْ شَاءَ فَلْيَتَأَخَّرْ

ترجمہ Book - حدیث 1647

کتاب: روزوں کی اہمیت وفضیلت باب: شک کے دن روزہ رکھنا منع ہے ابو عبدالرحمن قاسم بن عبدالرحمن بن عبداللہ بن مسعود ؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے معاویہ ب ابو سفیان ؓ کو منبر پر یہ فرماتے سنا کہ رسول اللہ ﷺ ماہ رمضان (شروع ہونے) سے پہلے منبر پر فر دیا کرتے تھے: ’’روزہ فلاں دن ہوگا اور ہم ( عادتاً) اس سے پہلے روزہ رکھنے والے ہیں۔ اب جو چاہے پہلے شروع کر لے اور جو چاہے بعد میں( رمضان شروع ہونے پر روزہ رکھنا )شروع کرے۔‘‘ یہ حدیث ضعیف ہے۔علاوہ ازیں یہ حدیث ابو ہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی اس صحیح حدیث کے خلاف بھی ہے۔ جو آگے آرہی ہے دیکھئے۔(حدیث 1650)