Book - حدیث 1608

كِتَابُ الْجَنَائِزِ بَابُ مَا جَاءَ فِيمَن أَصِيبَ بِسِقطٍ ضعيف حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى وَمُحَمَّدُ بْنُ إِسْحَقَ أَبُو بَكْرٍ الْبَكَّائِيُّ قَالَا حَدَّثَنَا أَبُو غَسَّانَ قَالَ حَدَّثَنَا مَنْدَلٌ عَنْ الْحَسَنِ بْنِ الْحَكَمِ النَّخَعِيِّ عَنْ أَسْمَاءَ بِنْتِ عَابِسِ بْنِ رَبِيعَةَ عَنْ أَبِيهَا عَنْ عَلِيٍّ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِنَّ السِّقْطَ لَيُرَاغِمُ رَبَّهُ إِذَا أَدْخَلَ أَبَوَيْهِ النَّارَ فَيُقَالُ أَيُّهَا السِّقْطُ الْمُرَاغِمُ رَبَّهُ أَدْخِلْ أَبَوَيْكَ الْجَنَّةَ فَيَجُرُّهُمَا بِسَرَرِهِ حَتَّى يُدْخِلَهُمَا الْجَنَّةَ قال ابو علی:یراغم ربہ‘یغاضب

ترجمہ Book - حدیث 1608

کتاب: جنازے سے متعلق احکام و مسائل باب: ناتمام بچے کی پیدائش کا صدمہ اٹھانے کا ثواب علی ؓ سے روایت ہے ،رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ’’نا تمام بچہ اپنے رب سے جھگڑا کرے گا( اصرار کے ساتھ شفاعت کرے گا) جب اس کا رب اس کے والدین کو جہنم میں داخل کرے گا۔( اس کی اس شفاعت کے نتیجے میں) اسے کہا جائے گا: اے اپنے رب سے جھگڑنے والے ناتمام بچے! اپنے ماں باپ کو جنت میں لے جا، چنانچہ وہ انہیں اپنی آنول سے کھینچ کر جنت میں داخل کردے گا۔‘‘ ابو علی نے کہا: (یراغم ربہ) کے معنی ہیں( یغاضب) کہ وہ اپنے رب سے ناراضی کا اظہار کرے گا۔