Book - حدیث 1344

كِتَابُ إِقَامَةِ الصَّلَاةِ وَالسُّنَّةُ فِيهَا بَابُ مَا جَاءَ فِيمَنْ نَامَ عَنْ حِزْبِهِ مِنْ اللَّيْلِ صحیح حَدَّثَنَا هَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ الْحَمَّالُ حَدَّثَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ عَلِيٍّ الْجُعْفِيُّ عَنْ زَائِدَةَ عَنْ سُلَيْمَانَ الْأَعْمَشِ عَنْ حَبِيبِ بْنِ أَبِي ثَابِتٍ عَنْ عَبْدَةَ بْنِ أَبِي لُبَابَةَ عَنْ سُوَيْدِ بْنِ غَفَلَةَ عَنْ أَبِي الدَّرْدَاءِ يَبْلُغُ بِهِ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ مَنْ أَتَى فِرَاشَهُ وَهُوَ يَنْوِي أَنْ يَقُومَ فَيُصَلِّيَ مِنْ اللَّيْلِ فَغَلَبَتْهُ عَيْنُهُ حَتَّى يُصْبِحَ كُتِبَ لَهُ مَا نَوَى وَكَانَ نَوْمُهُ صَدَقَةً عَلَيْهِ مِنْ رَبِّهِ

ترجمہ Book - حدیث 1344

کتاب: نماز کی اقامت اور اس کا طریقہ باب: جو شخص نیند کی وجہ سے رات کو معمول کی تلاوت یا اذکار نہ کر سکے وہ کیا کرے؟ ابو درداء ؓ سے روایت ہے، نبی ﷺ نے فرمایا: ’’جو شخص اپنے بستر پر ( سونے کے لیے) آتا ہے اور اس کی نیت ہوتی ہے کہ وہ رات کو اٹھ کر نماز پڑھے گا، پھر اس پر صبح تک نیند غالب آجاتی ہے ،اس کے لیے اس کی نیت کے مطابق(پورا ثواب) لکھا جائے گا اور اس کی نیند اس کے رب کی طرف سے اس پر صدقہ ہوگی۔‘‘ 1۔نیت دل کے ارادے کا نام ہے۔یعنی سوتے وقت پورا پختہ ارادہ ہونا چاہیے۔کہ آج رات کو جاگنا ضرور ہے۔تاکہ تہجد ادا کی جائے۔یہ نہیں کہ دل میں عزم تو نہ ہو۔ صرف زبان سے یہ اظہار کرکے سمجھے کہ نیند بھی پوری کرلیں گے۔اور ثواب بھی مل جائے گا۔اس قسم کاارادہ حقیقی نیت ہے ہی نہیں۔لہذا اس پر مذکورہ ثواب نہیں ملےگا۔2۔خلوص نیت کی یہ برکت ہے۔کہ عمل نہ ہوسکنے پر بھی ثواب مل جاتاہے۔بشرط یہ کہ جان بوجھ کر سستی اور کوتاہی نہ کی جائے۔