Book - حدیث 1244

كِتَابُ إِقَامَةِ الصَّلَاةِ وَالسُّنَّةُ فِيهَا بَابُ مَا جَاءَ فِي الْقُنُوتِ فِي صَلَاةِ الْفَجْرِ صحیح حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ عَنْ الزُّهْرِيِّ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ قَالَ لَمَّا رَفَعَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَأْسَهُ مِنْ صَلَاةِ الصُّبْحِ قَالَ اللَّهُمَّ أَنْجِ الْوَلِيدَ بْنَ الْوَلِيدِ وَسَلَمَةَ بْنَ هِشَامٍ وَعَيَّاشَ بْنَ أَبِي رَبِيعَةَ وَالْمُسْتَضْعَفِينَ بِمَكَّةَ اللَّهُمَّ اشْدُدْ وَطْأَتَكَ عَلَى مُضَرَ وَاجْعَلْهَا عَلَيْهِمْ سِنِينَ كَسِنِي يُوسُفَ

ترجمہ Book - حدیث 1244

کتاب: نماز کی اقامت اور اس کا طریقہ باب: نماز فجر میں دعائے قنوت کا بیان سیدنا ابو ہریرہ ؓ سے روایت ہے، انہوں نے فرمایا: رسول اللہ ﷺ نے جب فجر کی نماز میں (رکوع سے) سر اٹھایا تو فرمایا: اے اللہ! ولید بن ولید، سلمہ بن ہشام، عیاش بن ربیعہ ؓم اور مکہ کے ( دوسرے ) کمزور افراد کو( مشرکوں سے) نجات دے۔ اے اللہ! قبیلہ مضر( کے کافروں ) پر گرفت کو شدید تر کر دے اور ان پر یوسف  ( کے زمانے) کے سالوں جیسے ( قحط اور سختی کے) سال مسلط فر دے۔‘‘ 1۔قنوت نازلہ آخری رکعت میں رکوع کے بعد پڑھی جاتی ہے۔2۔اس میں امام بلند آواز سے مناسب دعایئں کرتا ہے۔3۔قنوت نازلہ میں مظلوم مسلمانوں کا نام لے کر ان کے حق میں اور کافروں کانام لے کر ان کے خلاف دعا کی جاسکتی ہے۔دیکھئے۔(صحیح البخاری التفسیر۔باب(ليس لك من الامر شئ)حدیث 4560 وصحیح المسلم المساجد باب استحباب القنوت فی جمیع الصلواۃ۔۔۔حدیث 675)