Book - حدیث 1078

كِتَابُ إِقَامَةِ الصَّلَاةِ وَالسُّنَّةُ فِيهَا بَابُ مَا جَاءَ فِيمَنْ تَرَكَ الصَّلَاةَ صحیح حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَيْنَ الْعَبْدِ وَبَيْنَ الْكُفْرِ تَرْكُ الصَّلَاةِ

ترجمہ Book - حدیث 1078

کتاب: نماز کی اقامت اور اس کا طریقہ باب: نماز چھوڑنے والے کا حکم سیدنا جابر بن عبداللہ ؓ سے روایت ہے، رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ’’بندے اور کفر کے درمیان (تعلق قائم کرنے والا عمل )ترک نماز ہے۔‘‘ 1۔نما ز اسلام کے بنیادی ارکان میں سے ہے۔ جو ہر نبی کی شریعت میں فرض رہی ہے۔مثلاً حضرت موسیٰ ؑ کو پہلی وحی کے موقع ہی پر حکم ہوا۔ إِنَّنِي أَنَا اللَّـهُ لَا إِلَـٰهَ إِلَّا أَنَا فَاعْبُدْنِي وَأَقِمِ الصَّلَاةَ لِذِكْرِي (طہٰ ۔14) یقیناً میں ہی اللہ ہوں۔میرے سوا کوئی معبود نہیں پس میری عبادت کر اور میری یاد کےلئے نماز قائم کر حضرت عیسیٰ ؑ نے جب گہوارے میں کلام کیا۔تو فرمایا۔ قَالَ إِنِّي عَبْدُ اللَّـهِ آتَانِيَ الْكِتَابَ وَجَعَلَنِي نَبِيًّا ﴿٣٠﴾ وَجَعَلَنِي مُبَارَكًا أَيْنَ مَا كُنتُ وَأَوْصَانِي بِالصَّلَاةِ وَالزَّكَاةِ مَا دُمْتُ حَيًّا (مریم۔30۔31)(عیسیٰ ؑ نے) کہا:میں اللہ کا بندہ ہوں۔اس نے مجھے کتاب دی اور نبی ؑ بنایا ہے۔اور مجھے برکت والا بنایا ہے جہاں بھی میں ہوں۔اور مجھے زندگی بھر نماز اور زکواۃ پر پابند رہنے کا حکم دیا ہے۔ 2۔نماز کو یہ اہمیت اس لئے حاصل ہے کہ اسلام کی تمام تعلیمات کا محور عقیدہ توحید ہے۔توحید تمام معبودان باطلہ سے ہٹا کر ایک اللہ کی طرف لے آتی ہے۔ جو شخص ایک اللہ کی عبادت بھی نہ کرنا چاہے اسے اللہ پر ایمان رکھنے والا کیسے سمجھا جاسکتا ہے۔3۔بے نماز کو اکثر علماء کرام نے کافر قرار دیا ہے۔ البتہ بعض علماء کرام سستی کی بنا پر نماز ترک کرنے والے کو کافر قرار نہیں دیتے۔تاہم انکار کرنے والاان کے نزدیک بھی دائرہ اسلام سے خارج ہے۔