Book - حدیث 1070

كِتَابُ إِقَامَةِ الصَّلَاةِ وَالسُّنَّةُ فِيهَا بَابُ الْجَمْعِ بَيْنَ الصَّلَاتَيْنِ فِي السَّفَرِ صحیح حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ عَنْ سُفْيَانَ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ عَنْ أَبِي الطُّفَيْلِ عَنْ مُعَاذِ بْنِ جَبَلٍ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ جَمَعَ بَيْنَ الظُّهْرِ وَالْعَصْرِ وَالْمَغْرِبِ وَالْعِشَاءِ فِي غَزْوَةِ تَبُوكَ فِي السَّفَرِ

ترجمہ Book - حدیث 1070

کتاب: نماز کی اقامت اور اس کا طریقہ باب: سفر میں دو نمازیں جمع کرکے پڑھنا سیدنا معاذ بن جبل ؓ سے روایت ہے کہ نبی ﷺ نے غزوہٴ تبول کے موقع پر سفر میں ظہر اور عصر کو اور مغرب اور عشاء کو جمع کر کے پڑھا۔ 1۔سفر میں جس طرح نماز قصرکرنا جائز ہے۔اسی طرح دو نمازوں کو ملا کر ایک وقت میں پڑھ لینا بھی جائز ہے۔2۔سفر میں نمازیں جمع کرنے کے دو طریقے ہیں۔ایک تو یہ کہ پہلی نماز کو موءخر کرکے دوسری نماز کے وقت میں ادا کیاجائے۔یعنی ظہر کی نماز عصر کے وقت پڑھی جائے۔اور مغرب کی نماز عشاء کےوقت پڑھی جائےاسے جمع تاخیر کہتے ہیں۔دوسرا طریقہ یہ ہے کہ دوسری نماز کو معروف وقت سے پہلے پہلی نماز کے وقت ہی میں پڑھ لیا جائے۔یعنی عصر کو ظہر کے وقت اور عشاء کو مغرب کے وقت پڑھ لیاجائے اسے جمع تقدیم کہتے ہیں۔دیکھئے۔(جامع الترمذی الصلاۃ باب ماجاء فی الجمع بین الصلاتین حدیث 553)