الادب المفرد - حدیث 140

كِتَابُ بَابُ كُنَّ لِلْيَتِيمِ كَالْأَبِ الرَّحِيمِ حَدَّثَنَا مُوسَى قَالَ: حَدَّثَنَا سَلَّامُ بْنُ أَبِي مُطِيعٍ، عَنْ أَسْمَاءَ بْنِ عُبَيْدٍ قَالَ: قُلْتُ لِابْنِ سِيرِينَ: عِنْدِي يَتِيمٌ، قَالَ: اصْنَعْ بِهِ مَا تَصْنَعُ بِوَلَدِكَ، اضْرِبْهُ مَا تَضْرِبُ وَلَدَكَ

ترجمہ الادب المفرد - حدیث 140

کتاب یتیم کے لیے رحم دل باپ کی طرح ہو جاؤ حضرت اسماء بن عبید سے مروی ہے کہ میں نے ابن سیرین رحمہ اللہ سے پوچھا کہ میری زیر کفالت ایک یتیم ہے (میں اس سے کیسا سلوک کروں؟)انہوں نے فرمایا:اس سے وہی سلوک کرو جو اپنی اولاد سے کرتے ہو اور جس بات پر اپنی اولاد کو مارتے ہو اسے بھی مارو۔
تشریح : جس طرح مریض کو بچانے کے لیے بسا اوقات ڈاکٹر کو آپریشن کرنا پڑتا ہے اسی طرح والد کو بھی بعض اوقات اولاد کی تربیت کے لیے ان کی سرزنش کرنی پڑتی ہے۔ ایسا کرنا رحم دلی کے خلاف نہیں ہے۔ حد سے زیادہ نرمی اولاد کو بگاڑ دیتی ہے۔ اسی طرح زیر پرورش یتیم پر بھی اگر سختی کرنی پڑے تو جائز بلکہ مطلوب ہے۔ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے: ((عَلِّقُوا السَّوط حَیْثُ کِرَاهُ اَهْلُ الْبَیْتِ فَإنَّهٗ أدَبٌ لَهُمْ)) ’’گھر میں کوڑا سامنے لٹکا کر رکھو یہ بیوی بچوں کے لیے باعث ادب ہے۔‘‘ (معجم کبیر للطبراني:۳؍ ۹۲؍ ۲۔ سلسلة صحیحة، رقم:۱۴۴۷) بچے اپنے ہوں یا زیر کفالت ان کی صحیح تربیت کے لیے ضروری ہے کہ نرمی و شفقت کے ساتھ ساتھ بوقت ضرورت سختی بھی کی جائے۔
تخریج : صحیح۔ جس طرح مریض کو بچانے کے لیے بسا اوقات ڈاکٹر کو آپریشن کرنا پڑتا ہے اسی طرح والد کو بھی بعض اوقات اولاد کی تربیت کے لیے ان کی سرزنش کرنی پڑتی ہے۔ ایسا کرنا رحم دلی کے خلاف نہیں ہے۔ حد سے زیادہ نرمی اولاد کو بگاڑ دیتی ہے۔ اسی طرح زیر پرورش یتیم پر بھی اگر سختی کرنی پڑے تو جائز بلکہ مطلوب ہے۔ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے: ((عَلِّقُوا السَّوط حَیْثُ کِرَاهُ اَهْلُ الْبَیْتِ فَإنَّهٗ أدَبٌ لَهُمْ)) ’’گھر میں کوڑا سامنے لٹکا کر رکھو یہ بیوی بچوں کے لیے باعث ادب ہے۔‘‘ (معجم کبیر للطبراني:۳؍ ۹۲؍ ۲۔ سلسلة صحیحة، رقم:۱۴۴۷) بچے اپنے ہوں یا زیر کفالت ان کی صحیح تربیت کے لیے ضروری ہے کہ نرمی و شفقت کے ساتھ ساتھ بوقت ضرورت سختی بھی کی جائے۔