Book - حدیث 970

کِتَابُ تَفْرِيعِ اسْتِفْتَاحِ الصَّلَاةِ بَابُ التَّشَهُّدِ شاذ بزيادة إذا قلت حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ النُّفَيْلِيُّ، حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ، حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ الْحُرِّ عَنِ الْقَاسِمِ بْنِ مُخَيْمِرَةَ، قَالَ: أَخَذَ عَلْقَمَةُ بِيَدِي، فَحَدَّثَنِي أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ ابْنَ مَسْعُودٍ أَخَذَ بِيَدِهِ، وَأَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَخَذَ بِيَدِ عَبْدِ اللَّهِ، فَعَلَّمَهُ التَّشَهُّدَ فِي الصَّلَاةِ... فَذَكَرَ مِثْلَه، دُعَاءِ حَدِيثِ الْأَعْمَشِ إِذَا قُلْتَ هَذَا, أَوْ قَضَيْتَ هَذَا، فَقَدْ قَضَيْتَ صَلَاتَكَ، إِنْ شِئْتَ أَنْ تَقُومَ فَقُمْ، وَإِنْ شِئْتَ أَنْ تَقْعُدَ فَاقْعُدْ.

ترجمہ Book - حدیث 970

کتاب: نماز شروع کرنے کے احکام ومسائل باب: تشہد کا بیان قاسم بن مخیمرہ کہتے ہیں کہ جناب علقمہ نے میرا ہاتھ پکڑا اور بیان کیا کہ سیدنا عبداللہ بن مسعود ؓ نے میرا ہاتھ پکڑا اور رسول اللہ ﷺ نے سیدنا عبداللہ بن مسعود ؓ کا ہاتھ پکڑا اور انہیں نماز میں تشہد کے کلمات تعلیم فرمائے ۔ اور حدیث اعمش کی دعا کے مانند بیان کیا ۔ اور کہا ” جب تم یہ کہہ لو ، یا فرمایا پورا کر لو ، تو تم نے اپنی نماز پوری کر لی ۔ اگر چاہو تو اٹھ جاؤ اور اگر چاہو تو بیٹھے رہو ۔ “ اس روایت کا یہ حصہ(واذ قلت) جب تم یہ کہہ لو آخر تک حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ پر موقوف ان کا اپنا قول اور حدیث میں مدرج ہے۔دیکھئے۔(عون المبعود)اور حق یہ ہے کہ تشہد پڑھنا واجب ہے۔2۔نقل احادیث میں اس قسم کے لطائف موجود ہیں۔کہ راوی حدیث بیان کرنے میں اپنے شیخ کی ظاہری کیفیت کو بھی اختیا ر کرتے تھے۔جیسے کہ اس میں ہاتھ پکڑ کر حدیث بیان کرنے کا ذکر آیا ہے اور اسے مسلسل کی ایک نوع قراردیا گیا ہے۔