Book - حدیث 5238

كِتَابُ السَّلَامِ بَابٌ فِي اتِّخَاذِ الْغُرَفِ صحیح حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحِيمِ بْنُ مُطَرِّفٍ الرُّؤَاسِيُّ حَدَّثَنَا عِيسَى عَنْ إِسْمَعِيلَ عَنْ قَيْسٍ عَنْ دُكَيْنِ بْنِ سَعِيدٍ الْمُزَنِيِّ قَالَ أَتَيْنَا النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَسَأَلْنَاهُ الطَّعَامَ فَقَالَ يَا عُمَرُ اذْهَبْ فَأَعْطِهِمْ فَارْتَقَى بِنَا إِلَى عِلِّيَّةٍ فَأَخَذَ الْمِفْتَاحَ مِنْ حُجْرَتِهِ فَفَتَحَ

ترجمہ Book - حدیث 5238

کتاب: السلام علیکم کہنے کے آداب باب: بالا خانہ بنانا سیدنا دکین بن سعید مزنی ؓ بیان کرتے ہیں کہ ہم نبی کریم ﷺ کی خدمت میں حاضر ہوئے اور ہم نے آپ ﷺ سے غلے کا مطالبہ کیا ۔ تو آپ ﷺ نے فرمایا ” عمر ! جاؤ اور ان کو دو ۔ “ چنانچہ وہ ہمیں لے کر ایک بالا خانے پر چڑھے اور اپنے حجرے سے چابی لے کر اس کو کھولا ۔ فی الواقع ضرورت ہو تو مکان کے اوپر مکان بنانا جائز ہے۔