Book - حدیث 5233

كِتَابُ السَّلَامِ بَابٌ فِي الرَّجُلِ يُنَادِي الرَّجُلَ فَيَقُولُ لَبَّيْكَ حسن حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَعِيلَ حَدَّثَنَا حَمَّادٌ أَخْبَرَنَا يَعْلَى بْنُ عَطَاءٍ عَنْ أَبِي هَمَّامٍ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ يَسَارٍ أَنَّ أَبَا عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْفِهْرِيَّ قَالَ شَهِدْتُ مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حُنَيْنًا فَسِرْنَا فِي يَوْمٍ قَائِظٍ شَدِيدِ الْحَرِّ فَنَزَلْنَا تَحْتَ ظِلِّ الشَّجَرَةِ فَلَمَّا زَالَتْ الشَّمْسُ لَبِسْتُ لَأْمَتِي وَرَكِبْتُ فَرَسِي فَأَتَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ فِي فُسْطَاطِهِ فَقُلْتُ السَّلَامُ عَلَيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ قَدْ حَانَ الرَّوَاحُ قَالَ أَجَلْ ثُمَّ قَالَ يَا بِلَالُ قُمْ فَثَارَ مِنْ تَحْتِ سَمُرَةٍ كَأَنَّ ظِلَّهُ ظِلُّ طَائِرٍ فَقَالَ لَبَّيْكَ وَسَعْدَيْكَ وَأَنَا فِدَاؤُكَ فَقَالَ أَسْرِجْ لِي الْفَرَسَ فَأَخْرَجَ سَرْجًا دَفَّتَاهُ مِنْ لِيفٍ لَيْسَ فِيهِ أَشَرٌ وَلَا بَطَرٌ فَرَكِبَ وَرَكِبْنَا وَسَاقَ الْحَدِيثَ قَالَ أَبُو دَاوُد أَبُو عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْفِهْرِيُّ لَيْسَ لَهُ إِلَّا هَذَا الْحَدِيثُ وَهُوَ حَدِيثٌ نَبِيلٌ جَاءَ بِهِ حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ

ترجمہ Book - حدیث 5233

کتاب: السلام علیکم کہنے کے آداب باب: کسی کی پکار پر ” لبیک “ کہہ کر جواب دینا سیدنا ابوعبدالرحمٰن فہری ؓ بیان کرتے ہیں کہ میں غزوہ حنین میں رسول اللہ ﷺ کے ساتھ تھا ۔ ہم انتہائی گرمی کے دن میں چلتے رہے پھر ایک درخت کے سائے تلے اترے ۔ جب سورج ڈھل گیا تو میں نے اپنی زرہ پہن گھوڑے پر سوار ہوا اور رسول اللہ ﷺ کے پاس آ گیا ۔ آپ ﷺ اپنے خیمے میں تھے ۔ میں نے عرض کیا السلام عليك يا رسول الله ورحمة الله وبركاته کوچ کا وقت ہو گیا ہے ۔ آپ ﷺ نے فرمایا ہاں ! پھر فرمایا بلال ! اٹھو تو وہ ایک کیکر کے درخت کے نیچے سے اچھل کر اٹھے اور ان کا سایہ ایسے پڑ رہا تھا جیسے کسی پرندے کا ہو ۔ ( وہ بہت ہی نحیف جسم کے تھے ) انہوں نے کہا : میں حاضر ہوں اور حاضر ہوں اور آپ پر فدا ہوں ۔ آپ ﷺ نے فرمایا میرا گھوڑا تیار کرو ۔ ( اس پر زین رکھو ) چنانچہ اس نے ایسی زین نکالی جس کی گدیاں کھجور کی چھال سے بھری گئی تھیں ۔ ان میں کسی قسم کا تکبر اور بڑائی نہ تھی ( انتہائی سادہ تھیں )۔ چنانچہ آپ ﷺ سوار ہو گئے اور ہم بھی ۔ اور پوری حدیث بیان کی ۔ امام ابوداؤد ؓ فرماتے ہیں کہ ابوعبدالرحمٰن فہری سے یہی ایک حدیث مروی ہے اور یہ عمدہ حدیث ہے جسے حماد بن سلمہ نے روایت کیا ہے ۔ لبیک اگرچہ ایک تعبدی کلمہ ہے مگر جائز ہے کہ انسان کسی صاحب فضل کے بلانے پر اسے اس لفظ سے جواب دے ۔ بعض محققین نے اس روایت کو حسن قرار دیا ہے ۔