Book - حدیث 5195

كِتَابُ السَّلَامِ بَابُ كَيْفَ السَّلَامُ؟ صحيح حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ كَثِيرٍ أَخْبَرَنَا جَعْفَرُ بْنُ سُلَيْمَانَ عَنْ عَوْفٍ عَنْ أَبِي رَجَاءٍ عَنْ عِمْرَانَ بْنِ حُصَيْنٍ قَالَ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ السَّلَامُ عَلَيْكُمْ فَرَدَّ عَلَيْهِ السَّلَامَ ثُمَّ جَلَسَ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَشْرٌ ثُمَّ جَاءَ آخَرُ فَقَالَ السَّلَامُ عَلَيْكُمْ وَرَحْمَةُ اللَّهِ فَرَدَّ عَلَيْهِ فَجَلَسَ فَقَالَ عِشْرُونَ ثُمَّ جَاءَ آخَرُ فَقَالَ السَّلَامُ عَلَيْكُمْ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ فَرَدَّ عَلَيْهِ فَجَلَسَ فَقَالَ ثَلَاثُونَ.

ترجمہ Book - حدیث 5195

کتاب: السلام علیکم کہنے کے آداب باب: سلام کس طرح کہے ؟ سیدنا عمران بن حصین ؓ سے روایت ہے کہ ایک شخص نبی کریم ﷺ کی خدمت میں آیا اور کہا : ” السلام علیکم “ آپ ﷺ نے اس کے سلام کا جواب دیا اور وہ بیٹھ گیا ۔ تو نبی کریم ﷺ نے فرمایا ” دس ۔ “ پھر دوسرا آدمی آیا اور اس نے کہا : ” السلام علیکم ورحمتہ اﷲ “ آپ ﷺ نے اس کو جواب دیا اور وہ بیٹھ گیا ۔ تو آپ ﷺ نے فرمایا ” بیس ۔ “ پھر ایک اور آیا تو اس نے کہا : ” السلام علیکم ورحمتہ اﷲ وبرکاتہ “ آپ ﷺ نے اس کا جواب عنایت فرمایا اور وہ بیٹھ گیا ، تو آپ ﷺ نے فرمایا ” تیس ۔ “ سلام کے ہر کلمہ پر دس نیکیاں ملتی ہیں ،کو صرف(السلام علیکم ) کہے اسے دس ،جو اس پر (ورحمتہ اللہ ) کا اضافہ کرے اس بیس اور جو (وبرکاتہ) کا کلمہ بھی ملائے اسے تیس نیکیاں ملتی ہیں۔