Book - حدیث 4981

كِتَابُ الْأَدَبِ بَابٌ... صحیح حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَحْيَى، عَنْ سُفْيَانَ بْنِ سَعِيدٍ، قَالَ: حَدَّثَنِي عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ رُفَيْعٍ، عَنْ تَمِيمٍ الطَّائِيِّ، عَنْ عَدِيِّ ابْنِ حَاتِمٍ, أَنَّ خَطِيبًا خَطَبَ عِنْدَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، فَقَالَ: مَنْ يُطِعِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ, فَقَدْ رَشِدَ، وَمَنْ يَعْصِهِمَا! فَقَالَ: >قُمْ- أَوْ قَالَ:- اذْهَبْ فَبِئْسَ الْخَطِيبُ أَنْتَ<.

ترجمہ Book - حدیث 4981

کتاب: آداب و اخلاق کا بیان باب:... سیدنا عدی بن حاتم ؓ سے روایت ہے کہ ایک خطیب نے نبی کریم ﷺ کے سامنے خطبہ دیا تو اس نے کہا «من يطع الله ورسوله فقد رشد ومن يعصهما» ” جس نے اﷲ اور اس کے رسول کی اطاعت کی بلاشبہ وہ ہدایت یافتہ ہوا اور جس نے ان دونوں کی نافرمانی کی ۔ “ آپ ﷺ نے فرمایا ” چل کھڑا ہو ۔ “ یا فرمایا ” چلا جا ‘ تو بہت برا خطیب ہے ۔ “ اللہ اور اس کے رسول اللہ ﷺ کو ایک ہی کلمہ اور ضمیر تثنیہ میں جمع کرتے ہوئے یوں کہنا: (ومن يعصهما) جس نے ان دونوں کی نافرمانی کی ۔ خلاف ادب شمار کیاگیا ہے۔ ان کو جدا جدا کر کے(ورسوله) کہنا چاہئے۔