Book - حدیث 4975

كِتَابُ الْأَدَبِ بَابٌ لَا يَقُولُ الْمَمْلُوكُ رَبِّي وَرَبَّتِي صحیح حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، عَنْ أَيُّوبَ وَحَبِيبِ بْنِ الشَّهِيدِ وَهِشَامٍ، عَنْ مُحَمَّدٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، قَالَ: >لَا يَقُولَنَّ أَحَدُكُمْ: عَبْدِي وَأَمَتِي، وَلَا يَقُولَنَّ الْمَمْلُوكُ: رَبِّي وَرَبَّتِي، وَلْيَقُلِ الْمَالِكُ: فَتَايَ وَفَتَاتِي، وَلْيَقُلِ الْمَمْلُوكُ: سَيِّدِي وَسَيِّدَتِي, فَإِنَّكُمُ الْمَمْلُوكُونَ، وَالرَّبُّ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ<.

ترجمہ Book - حدیث 4975

کتاب: آداب و اخلاق کا بیان باب: لونڈی ، غلام اپنے آقا کو ” میرا رب “ نہ کہے سیدنا ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے کہرسول اللہ ﷺ نے فرمایا ” تم میں سے کوئی شخص اپنے غلام اور لونڈی کو «عبدي» میرے بندے “ یا «أمتي» ” میری بندی “ کے لفظ سے ہرگز نہ پکارے ۔ اور نہ کوئی غلام اپنے مالک کو «ربي» اور «ربتي» ” میرے رب “ کہے ۔ مالک کو چاہیئے کہ یوں پکارے «فتاى» اے میرے جوان “ «فتاتي» ” اے میری لڑکی “ اور مملوک کو چاہیئے کہ کہے «سيدي ، سيدتي» ” اے میرے سردار ! “ بلاشبہ تم سب مملوک ہو اور ” رب “ اللہ عزوجل ہی ہے ۔ “