Book - حدیث 4967

كِتَابُ الْأَدَبِ بَابٌ فِي الرُّخْصَةِ فِي الْجَمْعِ بَيْنَهُمَا صحیح حَدَّثَنَا عُثْمَانُ وَأَبُو بَكْرٍ ابْنَا أَبِي شَيْبَةَ، قَالَا: حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، عَنْ فِطْرٍ، عَنْ مُنْذِرٍ، عَنْ مُحَمَّدِ ابْنِ الْحَنَفِيَّةِ، قَالَ: قَالَ عَلِيٌّ رَحِمَهُ اللَّهُ: قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ! إِنْ وُلِدَ لِي مِنْ بَعْدِكَ وَلَدٌ أُسَمِّيهِ بِاسْمِكَ وَأُكَنِّيهِ بِكُنْيَتِكَ؟ قَالَ: >نَعَمْ<. وَلَمْ يَقُلْ أَبُو بَكْرٍ قُلْتُ، قَالَ: قَالَ عَلِيٌّ عَلَيْهِ السَّلَام لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ<.

ترجمہ Book - حدیث 4967

کتاب: آداب و اخلاق کا بیان باب: ( نبی کریم ﷺ کا ) نام اور کنیت جمع کر لینے کی رخصت کا بیان جناب محمد ابن حنفیہ ؓ بیان کرتے ہیں کہ سیدنا علی ؓ نے بتایا کہ میں نے رسول اللہ ﷺ سے عرض کیا : اے اللہ کے رسول ! اگر آپ کے بعد میرے ہاں بچہ پیدا ہو ، تو کیا میں اس کا نام اور کنیت آپ کے نام اور کنیت پر رکھ سکتا ہوں ؟ آپ ﷺ نے فرمایا ” ہاں ۔ “ ( راوی حدیث ) ابوبکر بن ابوشیبہ کے الفاظ میں «قلت» کا لفظ نہیں ہے بلکہ یوں ہے کہ «قال علي عليه السلام للنبي صلى الله عليه وسلم» ” سیدنا علی نے نبی کریم ﷺ سے پوچھا ۔ “ اس واقعےسے نام اورکنیت دونوں کے رکھنے کاجواز معلوم ہوتا ہے۔ واللہ اعلم