Book - حدیث 4904

كِتَابُ الْأَدَبِ بَابٌ فِي الْحَسَدِ ضعیف حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ صَالِحٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ وَهْبٍ قَالَ، أَخْبَرَنِي سَعِيدُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي الْعَمْيَاءِ أَنَّ سَهْلَ ابْنَ أَبِي أُمَامَةَ, حَدَّثَهُ أَنَّهُ دَخَلَ هُوَ وَأَبُوهُ عَلَى أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ بِالْمَدِينَةِ- فِي زَمَانِ عُمَرَ بْنِ عَبْدِ الْعَزِيزِ- وَهُوَ أَمِيرُ الْمَدِينَةِ، فَإِذَا هُوَ يُصَلِّي صَلَاةً خَفِيفَةً دَقِيقَةً، كَأَنَّهَا صَلَاةُ مُسَافِرٍ، أَوْ قَرِيبًا مِنْهَا، فَلَمَّا سَلَّمَ قَالَ أَبِي: يَرْحَمُكَ اللَّهُ، أَرَأَيْتَ هَذِهِ الصَّلَاةَ: الْمَكْتُوبَةَ أَوْ شَيْءٌ تَنَفَّلْتَهُ؟ قَالَ: إِنَّهَا الْمَكْتُوبَةُ، وَإِنَّهَا لَصَلَاةُ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ, مَا أَخْطَأْتُ إِلَّا شَيْئًا سَهَوْتُ عَنْهُ! فَقَالَ: إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ يَقُولُ: >لَا تُشَدِّدُوا عَلَى أَنْفُسِكُمْ فَيُشَدَّدَ عَلَيْكُمْ, فَإِنَّ قَوْمًا شَدَّدُوا عَلَى أَنْفُسِهِمْ فَشَدَّدَ اللَّهُ عَلَيْهِمْ، فَتِلْكَ بَقَايَاهُمْ فِي الصَّوَامِعِ وَالدِّيَارِ, {وَرَهْبَانِيَّةً ابْتَدَعُوهَا مَا كَتَبْنَاهَا عَلَيْهِمْ}[الحديد: 27]<. ثُمَّ غَدَا مِنَ الْغَدِ، فَقَالَ: >أَلَا تَرْكَبُ لِتَنْظُرَ وَلِتَعْتَبِرَ؟!<، قَالَ: نَعَمْ، فَرَكِبُوا جَمِيعًا، فَإِذَا هُمْ بِدِيَار-ٍ بَادَ أَهْلُهَا، وَانْقَضَوْا، وَفَنُوا- خَاوِيَةٍ عَلَى عُرُوشِهَا، فَقَالَ: أَتَعْرِفُ هَذِهِ الدِّيَارَ؟، فَقُلْتُ: >مَا أَعْرَفَنِي بِهَا وَبِأَهْلِهَا, هَذِهِ دِيَارُ قَوْمٍ أَهْلَكَهُمُ الْبَغْيُ وَالْحَسَدُ, إِنَّ الْحَسَدَ يُطْفِئُ نُورَ الْحَسَنَاتِ، وَالْبَغْيُ يُصَدِّقُ ذَلِكَ أَوْ يُكَذِّبُهُ، وَالْعَيْنُ تَزْنِي، وَالْكَفُّ وَالْقَدَمُ وَالْجَسَدُ وَاللِّسَانُ وَالْفَرْجُ, يُصَدِّقُ ذَلِكَ أَوْ يُكَذِّبُهُ<.

ترجمہ Book - حدیث 4904

کتاب: آداب و اخلاق کا بیان باب: حسد کے احکام و مسائل جناب سہل بن ابوامامہ ؓ نے بیان کیا کہ وہ اور اس کا والد مدینہ میں سیدنا انس بن مالک ؓ کے ہاں گئے ۔ یہ سیدنا عمر بن عبدالعزیز ؓ کے دور کی بات ہے ، جبکہ وہ مدینہ کے گورنر تھے ۔ ہم سیدنا انس ؓ کے ہاں پہنچے تو وہ بڑی ہلکی پھلکی نماز پڑھ رہے تھے ، گویا کہ مسافر کی نماز ہو یا اس کے قریب ۔ جب انہوں نے سلام پھیرا تو میرے والد نے پوچھا : اللہ آپ پر رحم فرمائے ! یہ بتائیں کہ یہ فرض نماز تھی یا آپ نے کوئی نفل پڑھے ہیں ؟ انہوں نے کہا : یہ فرض نماز تھی اور رسول اللہ ﷺ کی نماز ایسے ہی ہوتی تھی ۔ میں نے اس میں سے کوئی چیز نہیں چھوڑی سوائے اس کے جو کوئی میں بھول گیا ہوں ( تو وہ الگ بات ہے ) ۔ انہوں نے بیان کیا کہ رسول اللہ ﷺ فرمایا کرتے تھے ” اپنی جانوں پر سختی مت کرو ورنہ تم پر سختی کی جائے گی ۔ بلاشبہ کئی قوموں نے اپنی جانوں پر سختیاں کیں تو اللہ نے بھی ان پر سختی کی ۔ جنگلوں میں معبدوں کے اندر اور گرجا گھروں میں انہی لوگوں کے بقایا لوگ ہیں ( جن کا قرآن مجید میں ذکر ہے ) ۔ ان لوگوں نے رہبانیت اختیار کر لی ، انہوں نے یہ بدعت نکالی ، ہم نے اسے ان پر فرض نہیں کیا تھا ۔ “ ( الحدید 27 ) پھر ہم اگلے دن صبح کے وقت ان کے پاس گئے تو انہوں نے کہا : کیا تم سوار نہیں ہو جاتے کہ کچھ دیکھو اور عبرت پکڑو ۔ والد نے کہا : ہاں چلتے ہیں ۔ چنانچہ ہم سب سوار ہو لیے ۔ تو انہوں نے کچھ بستیاں دکھائیں کہ ان کے لوگ ہلاک ہو گئے تھے ، مر کھپ گئے تھے اور نہیں برباد کر دیا گیا تھا اور ان کی بستیاں اپنی چھتوں پر گری پڑی تھیں ۔ انہوں نے کہا : کیا تم ان بستیوں کو پہچانتے ہو ؟ والد نے کہا : نہیں ، مجھے ان بستیوں کا اور ان لوگوں کا کوئی علم نہیں ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ یہ اس قوم کی بستیاں ہیں جن کو بغاوت اور حسد نے ہلاک کر کے رکھ دیا تھا ۔ بلاشبہ حسد سے نیکیوں کا نور بجھ جاتا ہے اور بغاوت اس کی تصدیق کرتی ہے یا اسے جھٹلا دیتی ہے ۔ آنکھ زنا کرتی ہے اور پھر ہاتھ ، پاؤں ، جسم ، زبان اور شرمگاہ اس کی تصدیق کر دیتے ہیں یا تکذیب ۔ یہ روایت بھی ضعیف ہے۔ مگر حقیقت یہ ہے کہ حسد اور بغاوت کی وجہ سے افراد، خاندان اور قو میں دنیا کے اند ر ہی تباہ و برباد ہو کر رہ جاتی ہیں۔