Book - حدیث 4762

كِتَابُ السُّنَّةِ بَابٌ فِي قَتْلِ الْخَوَارِجِ صحیح حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَحْيَى، عَنْ شُعْبَةَ، عَنْ زِيَادِ بْنِ عِلَاقَةَ، عَنْ عَرْفَجَةَ، قَالَ: سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ: >سَتَكُونُ فِي أُمَّتِي هَنَاتٌ، وَهَنَاتٌ، وَهَنَاتٌ, فَمَنْ أَرَادَ أَنْ يُفَرِّقَ أَمْرَ الْمُسْلِمِينَ وَهُمْ جَمِيعٌ, فَاضْرِبُوهُ بِالسَّيْفِ, كَائِنًا مَنْ كَانَ<.

ترجمہ Book - حدیث 4762

کتاب: سنتوں کا بیان باب: خوارج کا بیان سیدنا عرفجہ ؓ سے روایت ہے ، وہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے ہوئے سنا ” میری امت میں فتنے ہوں گے ‘ فتنے اور فتنے ۔ چنانچہ جس نے چاہا کہ مسلمانوں کے معاملے میں تفرقہ ڈال دے جبکہ وہ متحد و متفق ہوں تو ایسے کو تلوار سے قتل کر دینا ‘ خواہ کوئی بھی ہو ۔ “ یہ فتنہ سب سے پہلے انہی لوگوں نے ڈالا جنہوں نے حضرت عثمان رضی اللہ کے خلاف بغاوت کی جو متفق علیہ خلیفہ راشد تھے ۔ بعد میں انہی لوگوں نے حضرت علی رضی اللہ کے خلاف خروج (بغاوت ) کیا ۔