Book - حدیث 4547

كِتَابُ الدِّيَاتِ بَابٌ فِي دِيَةِ الْخَطَإِ شِبْهِ الْعَمْدِ حسن حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ حَرْبٍ وَمُسَدَّدٌ الْمَعْنَى قَالَا حَدَّثَنَا حَمَّادٌ عَنْ خَالِدٍ عَنْ الْقَاسِمِ بْنِ رَبِيعَةَ عَنْ عُقْبَةَ بْنِ أَوْسٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ مُسَدَّدٌ خَطَبَ يَوْمَ الْفَتْحِ بِمَكَّةَ فَكَبَّرَ ثَلَاثًا ثُمَّ قَالَ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَحْدَهُ صَدَقَ وَعْدَهُ وَنَصَرَ عَبْدَهُ وَهَزَمَ الْأَحْزَابَ وَحْدَهُ إِلَى هَاهُنَا حَفِظْتُهُ عَنْ مُسَدَّدٍ ثُمَّ اتَّفَقَا أَلَا إِنَّ كُلَّ مَأْثُرَةٍ كَانَتْ فِي الْجَاهِلِيَّةِ تُذْكَرُ وَتُدْعَى مِنْ دَمٍ أَوْ مَالٍ تَحْتَ قَدَمَيَّ إِلَّا مَا كَانَ مِنْ سِقَايَةِ الْحَاجِّ وَسِدَانَةِ الْبَيْتِ ثُمَّ قَالَ أَلَا إِنَّ دِيَةَ الْخَطَإِ شِبْهِ الْعَمْدِ مَا كَانَ بِالسَّوْطِ وَالْعَصَا مِائَةٌ مِنْ الْإِبِلِ مِنْهَا أَرْبَعُونَ فِي بُطُونِ أَوْلَادِهَا وَحَدِيثُ مُسَدَّدٍ أَتَمُّ .

ترجمہ Book - حدیث 4547

کتاب: دیتوں کا بیان باب: قتل خطا جو عمد کے مشابہ ہو ، کی دیت سیدنا عبداللہ بن عمرو ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فتح مکہ کے دن خطبہ دیا اور تین بار «الله اكبر» کہا ۔ پھر فرمایا «لا إله إلا الله وحده صدق وعده ونصر عبده وهزم الأحزاب وحده» ” ایک اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں ، اس نے اپنا وعدہ سچا کر دکھایا ، اپنے بندے کی مدد کی ۔ اور اس ایک اکیلے ہی نے تمام گروہوں کو پسپا کر دیا “ یہاں تک کی روایت مجھے مسدد سے یاد ہے ۔ پھر سلیمان بن حرب اور مسدد دونوں روایت کرنے میں متفق ہیں ، فرمایا ” خبردار ! جاہلیت میں ذکر کیے جانے والے تمام مفاخر یا خون اور مال کے مطالبات میرے پاؤں تلے روندے جا رہے ہیں ۔ ( ان کی کوئی حیثیت نہیں اور کوئی مطالبہ نہیں ہو گا ) سوائے اس کے جو حاجیوں کو پانی پلانے کی خدمت تھی یا بیت اللہ کی خدمت کا شرف تھا ( وہ باقی رہے گا ) ۔ “ پھر فرمایا ” خبردار ! قتل خطا جو عمد کے مشابہ ہو ، جو سانٹے یا لاٹھی کی مار سے ہوا ہو اس کی دیت سو اونٹ ہے ۔ ان میں چالیس اونٹنیاں ایسی ہوں جن کے پیٹوں میں بچے ہوں ۔“ اور مسدد کی روایت زیادہ کامل ہے ۔ قتل خطا شبہ عمد کی دیت کا یہ باب اس مقام پر بعض نسخوں کے اعتبار سے ہے ،ورنہ اکثر نسخوں میں یہ باب فیمن تطبب۔۔۔ کے بعد ہے ،جیسا کہ اس نسخے میں بھی دوبارہ یہ باب وہاں موجو د ہے ،قتل کی تین قسمیں ہیں ۔ قتل عمد (جو قصدجان بوجھ کر ہو ) قتل خطا (جو بلا قصد وارادہ ہو جائے ) قتل خطا شبہ العمد یعنی مارنے والے نے قصد کو ئی ایسی چیز ماری جس سے کوئی مرتا نہیں ہے ۔،نہ اس کی نیت ہی اسے قتل کرنے کی تھی ۔ مثلا لاٹھی ،کوڑا یا پتھر مارا جس سے آدمی عموما مرتا نہیں ہے ،مگر اتفاقامضروب مر گیا ۔