Book - حدیث 4086

كِتَابُ اللِّبَاسِ بَابُ مَا جَاءَ فِي إِسْبَالِ الْإِزَارِ ضعیف حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَعِيلَ حَدَّثَنَا أَبَانُ حَدَّثَنَا يَحْيَى عَنْ أَبِي جَعْفَرٍ عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ قَالَ بَيْنَمَا رَجُلٌ يُصَلِّي مُسْبِلًا إِزَارَهُ فَقَالَ لَهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اذْهَبْ فَتَوَضَّأْ فَذَهَبَ فَتَوَضَّأَ ثُمَّ جَاءَ فَقَالَ اذْهَبْ فَتَوَضَّأْ فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ يَا رَسُولَ اللَّهِ مَا لَكَ أَمَرْتَهُ أَنْ يَتَوَضَّأَ ثُمَّ سَكَتَّ عَنْهُ قَالَ إِنَّهُ كَانَ يُصَلِّي وَهُوَ مُسْبِلٌ إِزَارَهُ وَإِنَّ اللَّهَ لَا يَقْبَلُ صَلَاةَ رَجُلٍ مُسْبِلٍ

ترجمہ Book - حدیث 4086

کتاب: لباس سے متعلق احکام و مسائل باب: تہبند ، شلوار اور پینٹ وغیرہ کا ٹخنے سے نیچے لٹکانا ( ناجائز ہے ) سیدنا ابوہریرہ ؓ سے منقول ہے کہ اتفاق سے ایک آدمی نماز پڑھ رہا تھا اور اس کا تہبند ٹخنوں سے نیچے لٹک رہا تھا ۔ تو رسول اللہ ﷺ نے اسے فرمایا ” جاؤ اور وضو کرو ۔ “ چنانچہ وہ گیا اور وضو کر کے آیا ۔ پھر آیا تو آپ ﷺ نے فرمایا ” جاؤ اور وضو کرو ۔ “ تو ایک آدمی نے آپ ﷺ سے کہا : اے اللہ کے رسول ! کیا وجہ تھی کہ آپ نے اس کو وضو کرنے کا حکم دیا پھر آپ ﷺ خاموش ہو رہے ؟ آپ ﷺ نے فرمایا ” یہ شخص تہبند لٹکائے نماز پڑھ رہا تھا اور اللہ تعالیٰ ( ٹخنے سے نیچے کپڑا ) لٹکانے والے ( مرد ) کی نماز قبول نہیں کرتا ۔“ 1 : امام نووی رحمتہ نے ریاض الصالحین میں اس حدیث کو صحیح مسلم کی شروط پر صحیح کہا ہے ۔ 2 : مردوں کے لئے تہ بند اور شلوار کا لٹکانا بہت قبیح اور گناہ کا کام ہے جوان کی عبادت کی قبولیت پر اثراندازہوجاتاہے ۔ نماز میں اورنماز کے علاوہ ہر حال میں اس سے پچنا واجب ہےاور عورتو ں کو نماز میں پاوں ڈھانپنا لازم ہے اور جب غیر محرم کی نظر پڑتی ہو تو اس کا اہتمام اور بھی واجب ہے ۔