Book - حدیث 3391

كِتَابُ الْبُيُوعِ بَابٌ فِي الْمُزَارَعَةِ حسن حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْدٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عِكْرِمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ هِشَامٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي لَبِيبَةَ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ عَنْ سَعْدٍ قَالَ كُنَّا نُكْرِي الْأَرْضَ بِمَا عَلَى السَّوَاقِي مِنْ الزَّرْعِ وَمَا سَعِدَ بِالْمَاءِ مِنْهَا فَنَهَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ ذَلِكَ وَأَمَرَنَا أَنْ نُكْرِيَهَا بِذَهَبٍ أَوْ فِضَّةٍ

ترجمہ Book - حدیث 3391

کتاب: خرید و فروخت کے احکام و مسائل باب: مزارعت یعنی بٹائی پر زمین دینا سیدنا سعد بن ابی وقاص ؓ نے بیان کیا کہ ہم اپنی زمینیں کرائے ( بٹائی ) پر دیا کرتے تھے اور ساتھ ہی یہ طے ہوتا تھا کہ جو کچھ نالیوں پر پیدا ہو گا یا جس حصے کو از خود پانی پہنچتا ہو ( تو وہ مالک کا ہو گا ) رسول اللہ ﷺ نے ہمیں اس سے منع فر دیا ۔ اور حکم دیا کہ ہم اپنی زمین سونے یا چاندی ( کرنسی ) کے بدلے کرایہ پر دیں ( یعنی متعین رقم پر ٹھیکہ کر لیا کریں ) ۔ یہ روایت سند ا ضعیف ہے۔ تاہم ایک ہی کھیت کے مختلف حصوں کی پیداوار پر مختلف طریقوںسے حق رکھنا تنازع کا سبب بنتا ہے۔ اس میں دونوں کے حقوق صحیح طور پرمتعین بھی نہیں ہو پاتے۔اس لئے سارا حساب کتاب ایک ہی دفعہ کرکے متعین نقدی کے عوض کرایہ پر زمین دےدینے کی صورت میں اختیارکرنے کی تلقین کی گئی۔