Book - حدیث 3387

كِتَابُ الْبُيُوعِ بَابٌ فِي الرَّجُلِ يَتَّجِرُ فِي مَالِ الرَّجُلِ بِغَيْرِ إِذْنِهِ منكر بهذه الزياد التي في أوله وهو في الصحيحين دونها حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلَاءِ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَمْزَةَ أَخْبَرَنَا سَالِمُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ أَبِيهِ قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ مَنْ اسْتَطَاعَ مِنْكُمْ أَنْ يَكُونَ مِثْلَ صَاحِبِ فَرْقِ الْأَرُزِّ فَلْيَكُنْ مِثْلَهُ قَالُوا وَمَنْ صَاحِبُ فَرْقِ الْأَرُزِّ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَذَكَرَ حَدِيثَ الْغَارِ حِينَ سَقَطَ عَلَيْهِمْ الْجَبَلُ فَقَالَ كُلُّ وَاحِدٍ مِنْهُمْ اذْكُرُوا أَحْسَنَ عَمَلِكُمْ قَالَ وَقَالَ الثَّالِثُ اللَّهُمَّ إِنَّكَ تَعْلَمُ أَنِّي اسْتَأْجَرْتُ أَجِيرًا بِفَرْقِ أَرُزٍّ فَلَمَّا أَمْسَيْتُ عَرَضْتُ عَلَيْهِ حَقَّهُ فَأَبَى أَنْ يَأْخُذَهُ وَذَهَبَ فَثَمَّرْتُهُ لَهُ حَتَّى جَمَعْتُ لَهُ بَقَرًا وَرِعَاءَهَا فَلَقِيَنِي فَقَالَ أَعْطِنِي حَقِّي فَقُلْتُ اذْهَبْ إِلَى تِلْكَ الْبَقَرِ وَرِعَائِهَا فَخُذْهَا فَذَهَبَ فَاسْتَاقَهَا

ترجمہ Book - حدیث 3387

کتاب: خرید و فروخت کے احکام و مسائل باب: جب کوئی شخص کسی کے مال میں اس کی اجازت کے بغیر تجارت کرے جناب سالم بن عبداللہ اپنے والد ( سیدنا عبداللہ بن عمر ؓ ) سے روایت کرتے ہیں ‘ وہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ سے سنا ‘ آپ ﷺ فرماتے تھے ” تم میں سے جو کوئی چاولوں کے ٹوپے والے کی مانند بن سکتا ہو تو بن جائے ۔ ” صحابہ نے پوچھا کہ اے اﷲ کے رسول ! یہ چاولوں کے ٹوپے والا کون ہے ؟ تو آپ نے غار والوں کی حدیث بیان کی جب کہ ان پر ایک چٹان آ پڑی تھی ۔ تو ان میں سے ہر ایک نے کہا تھا کہ اپنا بہترین عمل بیان کرو ۔ چنانچہ تیسرے آدمی نے کہا : ” اے اﷲ ! تو بخوبی جانتا ہے کہ میں ایک مزدور لایا اور اس کے ساتھ چاولوں کا ایک ٹوپہ مزدوری طے کی ۔ جب شام ہوئی تو میں نے اسے اس کا حق پیش کیا ‘ مگر اس نے لینے سے انکار کر دیا ۔ تو پھر میں نے انہیں کاشت کر دیا حتیٰ کہ اس کے لیے گائیں اور چرواہے اکٹھے کر لیے ۔ پھر وہ مجھے ملا اور کہنے لگا کہ میرا حق مجھے دے دو ۔ تو میں نے کہا : جاؤ یہ گائیں اور ان کے چرواہے لے جاؤ ۔ چنانچہ وہ انہیں ہانک لے گیا ۔ “ 1۔یہ واقعہ تفصیل سے صحیح بخاری میں وار د ہے۔دیکھئے۔(صحیح البخاری۔الحرث والمزارعۃ حدیث2333)2۔خیر خواہی کی نیت سے مسلمان بھائی کے مال کوتحفظ اور فائدہ پہنچانے کےلئے اس کے مال کی بلااجازت تجارت جائز ہے۔