Book - حدیث 3268

كِتَابُ الْأَيْمَانِ وَالنُّذُورِ بَابٌ فِي الْقَسَمِ هَلْ يَكُونُ يَمِينًا صحیح حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى بْنِ فَارِسٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ قَالَ ابْنُ يَحْيَى كَتَبْتُهُ مِنْ كِتَابِهِ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، قَالَ: كَانَ أَبُو هُرَيْرَةَ يُحَدِّثُ أَنَّ رَجُلًا أَتَى رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، فَقَالَ: إِنِّي أَرَى اللَّيْلَةَ... فَذَكَرَ رُؤْيَا، فَعَبَّرَهَا أَبُو بَكْرٍ، فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّم:َ >أَصَبْتَ بَعْضًا، وَأَخْطَأْتَ بَعْضًا<، فَقَالَ: أَقْسَمْتُ عَلَيْكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ! بِأَبِي أَنْتَ لَتُحَدِّثَنِّي مَا الَّذِي أَخْطَأْتُ؟ فَقَالَ لَهُ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: >لَا تُقْسِمْ<.

ترجمہ Book - حدیث 3268

کتاب: قسم کھانے اور نذر کے احکام و مسائل باب: کیا کسی کو قسم دینا بھی قسم میں داخل ہے ؟ جناب ابن عباس ؓ سے مروی ہے کہ سیدنا ابوہریرہ ؓ بیان کرتے تھے کہ ایک شخص رسول اللہ ﷺ کی خدمت میں آیا اور کہا : بیشک میں نے آج رات خواب دیکھا ہے اور پھر اس نے اپنا خواب بیان کیا ۔ اور پھر سیدنا ابوبکر ؓ نے اس کی تعبیر کی تو نبی کریم ﷺ نے فرمایا ” تم نے کچھ میں درست کہا ہے اور کچھ میں خطا کی ہے ۔ “ تو انہوں نے کہا : اے اللہ کے رسول ! میں آپ کو قسم دیتا ہوں ‘ میرا باپ آپ پر فدا ہو ! آپ مجھے ضرور بتائیے کہ میں نے کیا غلطی کی ہے ‘ تو نبی کریم ﷺ نے ان سے فرمایا ” قسم مت دو ۔ “