Book - حدیث 3090

كِتَابُ الْجَنَائِزِ بَابُ الْأَمْرَاضِ الْمُكَفِّرَةِ لِلذُّنُوبِ صحیح حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ النُّفَيْلِيُّ وَإِبْرَاهِيمُ بْنُ مَهْدِيٍّ الْمِصِّيصِيُّ الْمَعْنَى قَالَا حَدَّثَنَا أَبُو الْمَلِيحِ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ خَالِدٍ قَالَ أَبُو دَاوُد قَالَ إِبْرَاهِيمُ بْنُ مَهْدِيٍّ السَّلَمِيُّ عَنْ أَبِيهِ عَنْ جَدِّهِ وَكَانَتْ لَهُ صُحْبَةٌ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ إِنَّ الْعَبْدَ إِذَا سَبَقَتْ لَهُ مِنْ اللَّهِ مَنْزِلَةٌ لَمْ يَبْلُغْهَا بِعَمَلِهِ ابْتَلَاهُ اللَّهُ فِي جَسَدِهِ أَوْ فِي مَالِهِ أَوْ فِي وَلَدِهِ قَالَ أَبُو دَاوُد زَادَ ابْنُ نُفَيْلٍ ثُمَّ صَبَّرَهُ عَلَى ذَلِكَ ثُمَّ اتَّفَقَا حَتَّى يُبْلِغَهُ الْمَنْزِلَةَ الَّتِي سَبَقَتْ لَهُ مِنْ اللَّهِ تَعَالَى

ترجمہ Book - حدیث 3090

کتاب: جنازے کے احکام و مسائل باب: بیماریوں کے گناہوں کا کفارہ بننے کا بیان محمد بن خالد سے روایت ہے ‘ امام ابوداؤد ؓ فرماتے ہیں کہ ابراہیم بن مھدی نے اس راوی ( محمد بن خالد ) کے متعلق کہا کہ یہ ” سلمی “ ہیں وہ اپنے والد سے ‘ وہ اپنے دادا سے روایت کرتے ہیں ‘ جنہیں رسول اللہ ﷺ کی صحبت کا شرف حاصل تھا ‘ کہا کہ میں نے رسول اللہ ﷺ سے سنا آپ ﷺ فرماتے تھے ” بیشک بندے کے لیے جب اﷲ تعالیٰ کے ہاں کوئی مقام و مرتبہ مقدر ہو چکا ہو اور وہ اپنے اعمال کی بنا پر اس تک نہ پہنچ سکتا ہو ‘ تو اﷲ اسے اس کے اپنے جسم یا مال یا اولاد کی آزمائش میں ڈال دیتا ہے ۔ “ امام ابوداؤد ؓ فرماتے ہیں کہ ابن نفیل نے یہ اضافہ بیان کیا ” اور پھر اﷲ تعالیٰ اسے صبر کی توفیق بھی دیتا ہے ۔ “ پھر دونوں راوی حدیث بیان کرنے میں متفق ہو جاتے ہیں ۔ “ حتیٰ کہ اسے اس مقام و مرتبہ تک پہنچا دیتا ہے جو اﷲ تعالیٰ کی طرف سے پہلے ہی سے اس کے لیے مقدر ہو چکا ہوتا ہے ۔ “ گناہوں کےکفارے اور درجات کی بلندی کے اعتبا ر سے بیماریاں مومن کےلئے اللہ کا ایک بڑا انعام ہیں۔بشرط یہ کہ کما حقہ صبر کرسکے۔تاہم بیماری کا سوال نہیں کرنا چاہیے۔