Book - حدیث 2627

كِتَابُ الْجِهَادِ بَابٌ فِي الطَّاعَةِ حسن حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ مَعِينٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الصَّمَدِ بْنُ عَبْدِ الْوَارِثِ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ الْمُغِيرَةِ، حَدَّثَنَا حُمَيْدُ بْنُ هِلَالٍ، عَنْ بِشْرِ بْنِ عَاصِمٍ، عَنْ عُقْبَةَ بْنِ مَالِكٍ، مِنْ رَهْطِهِ قَالَ: بَعَثَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ سَرِيَّةً، فَسَلَحْتُ رَجُلًا مِنْهُمْ سَيْفًا، فَلَمَّا رَجَعَ، قَالَ: لَوْ رَأَيْتَ مَا لَامَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ! قَالَ: >أَعَجَزْتُمْ إِذْ بَعَثْتُ رَجُلًا مِنْكُمْ فَلَمْ يَمْضِ لِأَمْرِي أَنْ تَجْعَلُوا مَكَانَهُ مَنْ يَمْضِي لِأَمْرِي<.

ترجمہ Book - حدیث 2627

کتاب: جہاد کے مسائل باب: اطاعت کا بیان سیدنا عقبہ بن مالک ؓ سے مروی ہے جو کہ بشر بن عاصم کی قوم سے تھے ۔ انہوں نے بیان کیا کہ نبی کریم ﷺ نے ایک مہم بھیجی ، تو میں نے ان میں سے ایک آدمی کو تلوار دی جب وہ واپس آیا تو اس نے کہا : کاش کہ آپ ( وہ حالات ) دیکھتے جن پر رسول اللہ ﷺ نے ہمیں ملامت کی ۔ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ” کیا تم اس بات سے عاجز تھے کہ جب میرے بھیجے ہوئے آدمی نے میرے احکام کی تنفیذ نہیں کی تو تم اس کی جگہ کسی اور کو مقرر کر لیتے جو میرے احکام کی تنفیذ کرتا ؟ “ یہ حدیث حسن درجے کی ہے۔اور اس میں ہے کہ جب کوئی امیر یا حاکم شریعت کی تنفیذ نہ کرہاہو۔یا اس کی مخالفت کرتا ہو۔اور اس کو بدلنا ممکن ہو۔تو اس کو بدل کر دوسرا آدمی مقرر کرلیا جائے۔جو انہیں شریعت کے مطابق لے کر چلے۔