Book - حدیث 2307

كِتَابُ الطَّلَاقِ بَابٌ فِي عِدَّةِ الْحَامِلِ صحیح حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَمُحَمَّدُ بْنُ الْعَلَاءِ قَالَ عُثْمَانُ، حَدَّثَنَا وَقَالَ ابْنُ الْعَلَاءِ، أَخْبَرَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، حَدَّثَنَا الْأَعْمَشُ، عَنْ مُسْلِمٍ، عَنْ مَسْرُوقٍ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ، قَالَ: مَنْ شَاءَ لَاعَنْتُهُ, لَأُنْزِلَتْ سُورَةُ النِّسَاءِ الْقُصْرَى بَعْدَ الْأَرْبَعَةِ الْأَشْهُرِ وَعَشْرًا .

ترجمہ Book - حدیث 2307

کتاب: طلاق کے احکام و مسائل باب: حاملہ کی عدت کے احکام و مسائل سیدنا عبداللہ بن مسعود ؓ فرماتے ہیں کہ جو چاہے میں اس سے مباہلہ کر سکتا ہوں کہ چھوٹی سورۃ نساء ( سورۃ الطلاق ) چار ماہ دس دن ( کے سابقہ حکم ) کے بعد ہی نازل ہوئی تھی ۔ ( یہ حکم سورۃ البقرہ کی آیت 234 میں وارد ہوا ہے ) ۔ 1 : سورۃ الطلاق میں ہے کہ (واولات الااحمال ۔۔۔۔۔یضعن حملھن )(الطلاق:4 ) اور حاملہ عورتوں کی عدت یہ ہے کہ وضع حمل ہو جائے اور اس سورت کو سورۃالنساء القصر ۔ (چھوٹی سورۃ النسا)اس لیے کہا کہ جہاں معروف بڑی سورۃنساء میں عورتوں کے احکام ومسائل بیان ہوئے ہیں وہاں اس سورت میں بھی انہی مسائل ذکر کیے گئے ہیں ۔ 2 :حضرت عبداللہ رضی اللہ کا یہ قول معروف فقہی اصول کی اساس ہے کہ کسی مسئلے میں جہاں کہیں دو ہدایات وارد ہوں ان میں سے قابل عمل وہی ہوتی ہے جو بعد میں نازل ہوئی ہو۔ 3 :سورۃ البقرہ کی آیت کریمہ (والذین یتوفون منکم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشھرو عشر)(البقرہ 234 )اور سورۃ الطلاق کی آیت میں تعارض نہیں ہے ،بلکہ چار ماہ دس دن کی عدت ایسی عورتوں کے لئے جو حمل سے نہ ہوں اوراگر حمل ہو تو اس کی عدت وضع حمل ہے ۔