Book - حدیث 2218

كِتَابُ الطَّلَاقِ بَابٌ فِي الظِّهَارِ صحیح قَالَ أَبو دَاود: قَرَأْتُ عَلَى مُحَمَّدِ بْنِ وَزِيرٍ الْمِصْرِيِّ قُلْتُ: لَهُ حَدَّثَكُمْ بِشْرُ بْنُ بَكْرٍ، حَدَّثَنَا الْأَوْزَاعِيُّ، حَدَّثَنَا عَطَاءٌ، عَنْ أَوْسٍ -أَخِي عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ-، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَعْطَاهُ خَمْسَةَ عَشَرَ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ, إِطْعَامَ سِتِّينَ مِسْكِينًا. قَالَ أَبو دَاود: وَعَطَاءٌ لَمْ يُدْرِكْ أَوْسًا وَهُوَ مِنْ أَهْلِ بَدْرٍ قَدِيمُ الْمَوْتِ وَالْحَدِيثُ مُرْسَلٌ وَإِنَّمَا رَوَوْهُ عَنِ الْأَوْزَاعِيِّ، عَنْ عَطَاءٍ أَنَّ أَوْسًا.

ترجمہ Book - حدیث 2218

کتاب: طلاق کے احکام و مسائل باب: ظہار کے احکام و مسائل جناب عطاء ، سیدنا عبادہ بن صامت ؓ کے بھائی اوس ؓ سے روایت کرتے ہیں کہ نبی کریم ﷺ نے ان کو پندرہ صاع ” جَو “ عنایت کیے تھے ، یعنی ساٹھ مسکینوں کا کھانا ۔ امام ابوداؤد ؓ بیان کرتے ہیں کہ عطاء کی اوس سے ملاقات نہیں ہے ۔ اور یہ ( اوس ) اہل بدر میں سے تھے ، ان کی وفات بہت پہلے ہو گئی تھی ۔ اور یہ حدیث مرسل ہے ۔ محدثین اسے اوزاعی سے بواسطہ عطاء اور وہ اوس سے روایت کرتے ہیں ۔ گویایہ روایت جس میں جو کا ذکر ہے صحیح نہیں ہےبلکہ منقطع ہے۔محدثین کے نزدیک مرسل اور منقطع ہم معنی ہیں۔(عون المعبود)