Book - حدیث 1990

كِتَابُ الْمَنَاسِكِ بَابُ الْعُمْرَةِ حسن صحيح حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ وَحَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ عَنْ عَامِرٍ الْأَحْوَلِ عَنْ بَكْرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ قَالَ أَرَادَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْحَجَّ فَقَالَتْ امْرَأَةٌ لِزَوْجِهَا أَحِجَّنِي مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى جَمَلِكَ فَقَالَ مَا عِنْدِي مَا أُحِجُّكِ عَلَيْهِ قَالَتْ أَحِجَّنِي عَلَى جَمَلِكَ فُلَانٍ قَالَ ذَاكَ حَبِيسٌ فِي سَبِيلِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ فَأَتَى رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ إِنَّ امْرَأَتِي تَقْرَأُ عَلَيْكَ السَّلَامَ وَرَحْمَةَ اللَّهِ وَإِنَّهَا سَأَلَتْنِي الْحَجَّ مَعَكَ قَالَتْ أَحِجَّنِي مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقُلْتُ مَا عِنْدِي مَا أُحِجُّكِ عَلَيْهِ فَقَالَتْ أَحِجَّنِي عَلَى جَمَلِكَ فُلَانٍ فَقُلْتُ ذَاكَ حَبِيسٌ فِي سَبِيلِ اللَّهِ فَقَالَ أَمَا إِنَّكَ لَوْ أَحْجَجْتَهَا عَلَيْهِ كَانَ فِي سَبِيلِ اللَّهِ قَالَ وَإِنَّهَا أَمَرَتْنِي أَنْ أَسْأَلَكَ مَا يَعْدِلُ حَجَّةً مَعَكَ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَقْرِئْهَا السَّلَامَ وَرَحْمَةَ اللَّهِ وَبَرَكَاتِهِ وَأَخْبِرْهَا أَنَّهَا تَعْدِلُ حَجَّةً مَعِي يَعْنِي عُمْرَةً فِي رَمَضَانَ

ترجمہ Book - حدیث 1990

کتاب: اعمال حج اور اس کے احکام و مسائل باب: عمرے کے احکام و مسائل سیدنا ابن عباس ؓ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے حج کا ارادہ فرمایا تو ایک عورت نے اپنے شوہر سے کہا : مجھے بھی رسول اللہ ﷺ کے ساتھ اپنے اونٹ پر حج کراؤ ۔ اس نے کہا : میرے پاس کوئی ایسی سواری نہیں جس پر میں تمہیں حج کراؤں ۔ عورت نے کہا : اپنے فلاں اونٹ پر ؟ اس نے جواب دیا کہ وہ تو فی سبیل للہ ( جہاد کے لیے ) وقف ہے ۔ پس وہ رسول اللہ ﷺ کے پاس آیا اور کہنے لگا کہ میری بیوی نے آپ ﷺ کو السلام علیکم ورحمۃ اللہ کہا ہے ، اور وہ مجھے کہتی ہے کہ میں اس کو آپ کے ساتھ حج کراؤں ۔ وہ کہتی ہے ، مجھے رسول اللہ ﷺ کی معیت میں حج کراؤ ۔ تو میں نے اس سے کہا : میرے پاس کوئی سواری نہیں جس پر میں تجھے حج کراؤں ۔ اس نے کہا : اپنے فلاں اونٹ پر ۔ تو میں نے کہا : وہ تو فی سبیل للہ وقف ہے ۔ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ” اگر تم اسے اس پر حج کرا دو تو یہ بھی فی سبیل للہ ہی ہے ۔ “ اس نے کہا کہ اس ( عورت ) نے مجھے کہا ہے کہ میں آپ ﷺ سے یہ دریافت کروں کہ کون سا عمل آپ ﷺ کے ساتھ حج کے برابر ہو سکتا ہے ؟ تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ” اسے ( میری طرف سے ) السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ کہنا اور اسے بتانا کہ رمضان میں عمرہ کرنا میرے ساتھ حج کرنے کے برابر ہے ۔ “ اس حدیث سے بھی واضح ہے کہ حج کرنا بھی فی سبیل اللہ میں داخل ہے جو زکواۃ کا ایک مصرف ہے۔