Book - حدیث 1704

كِتَابُ اللُّقَطَةِ بَابُ التَّعْرِيفِ بِاللُّقَطَةِ صحیح حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا إِسْمَعِيلُ بْنُ جَعْفَرٍ عَنْ رَبِيعَةَ بْنِ أَبِي عَبْدِ الرَّحْمَنِ عَنْ يَزِيدَ مَوْلَى الْمُنْبَعِثِ عَنْ زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ الْجُهَنِيِّ أَنَّ رَجُلًا سَأَلَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ اللُّقَطَةِ قَالَ عَرِّفْهَا سَنَةً ثُمَّ اعْرِفْ وِكَاءَهَا وَعِفَاصَهَا ثُمَّ اسْتَنْفِقْ بِهَا فَإِنْ جَاءَ رَبُّهَا فَأَدِّهَا إِلَيْهِ فَقَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَضَالَّةُ الْغَنَمِ فَقَالَ خُذْهَا فَإِنَّمَا هِيَ لَكَ أَوْ لِأَخِيكَ أَوْ لِلذِّئْبِ قَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَضَالَّةُ الْإِبِلِ فَغَضِبَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حَتَّى احْمَرَّتْ وَجْنَتَاهُ أَوْ احْمَرَّ وَجْهُهُ وَقَالَ مَا لَكَ وَلَهَا مَعَهَا حِذَاؤُهَا وَسِقَاؤُهَا حَتَّى يَأْتِيَهَا رَبُّهَا

ترجمہ Book - حدیث 1704

کتاب: گری پڑی گمشدہ چیزوں سے متعلق مسائل باب: گری پڑی چیز اٹھائے تو اس کا اعلان کرنے کا حکم سیدنا زید بن خالد جہنی ؓ سے مروی ہے کہ ایک شخص نے رسول اللہ ﷺ سے گری پڑی چیز کے متعلق سوال کیا تو آپ ﷺ نے فرمایا ” ایک سال تک اس کا اعلان کرو ۔ پھر اس کا سربند ( بندھن ) اور تھیلی ( یا برتن جس میں وہ ہو ) خوب یاد کر لو ۔ اور اسے اپنے استعمال میں لے آؤ ۔ اگر اس کا ملک آ جائے تو اسے دے دو ۔ “ پھر اس نے کہا : اے اللہ کے رسول ! گمشدہ بکری ( کے بارے میں کیا ارشاد ہے ؟ ) آپ ﷺ نے فرمایا ” اسے لے لو ۔ یہ تمہارے لیے ہے یا تمہارے بھائی کے لیے یا بھیڑیے کے لیے ۔ “ کہنے لگا : اے اللہ کے رسول ! اور گمشدہ اونٹ ؟ اس پر آپ غصے میں آ گئے حتیٰ کہ آپ کے رخسار سرخ ہو گئے یا کہا کہ چہرہ سرخ ہو گیا ۔ اور فرمایا ” تمہیں اس سے کیا غرض ؟ اس کے ساتھ اس کا جوتا ( پاوں ) ہے اور مشکیزہ ہے ۔ ( اس کے پیٹ میں پانی ذخیرہ کرنے کی گنجائش اور صلاحیت ہے ) یہاں تک کہ اس کا مالک آ جائے گا ۔ “