Book - حدیث 1347

كِتَابُ التَّطَوُّعِ بَابُ فِي صَلَاةِ اللَّيْلِ صحیح حَدَّثَنَا هَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ، أَخْبَرَنَا بَهْزُ بْنُ حَكِيمٍ فَذَكَرَ هَذَا الْحَدِيثَ بِإِسْنَادِهِ، قَالَ: يُصَلِّي الْعِشَاءَ ثُمَّ يَأْوِي إِلَى فِرَاشِهِ لَمْ يَذْكُرِ الْأَرْبَعَ رَكَعَاتٍ... وَسَاقَ الْحَدِيثَ، وَقَالَ فِيهِ: فَيُصَلِّي ثَمَانِيَ رَكَعَاتٍ يُسَوِّي بَيْنَهُنَّ فِي الْقِرَاءَةِ وَالرُّكُوعِ وَالسُّجُودِ، وَلَا يَجْلِسُ فِي شَيْءٍ مِنْهُنَّ إِلَّا فِي الثَّامِنَةِ,فَإِنَّهُ كَانَ يَجْلِسُ ثُمَّ يَقُومُ وَلَا يُسَلِّمُ فِيهِ فَيُصَلِّي رَكْعَةً يُوتِرُ بِهَا، ثُمَّ يُسَلِّمُ تَسْلِيمَةً يَرْفَعُ بِهَا صَوْتَهُ حَتَّى يُوقِظَنَا... ثُمَّ سَاقَ مَعْنَاهُ.

ترجمہ Book - حدیث 1347

کتاب: نوافل اور سنتوں کے احکام ومسائل باب: رات کی نماز ( تہجد ) کا بیان بہز بن حکیم نے اپنی سابقہ سند سے یہ حدیث بیان کی اور کہا کہ آپ ﷺ عشاء کی نماز پڑھ کر اپنے بستر پر آ جاتے ۔ اس نے چار رکعت پڑھنے کا ذکر نہیں کیا ، اور بیان کیا کہ آپ ﷺ آٹھ رکعات پڑھتے ، ان کی قرآت ، رکوع اور سجود میں برابری ہوتی اور درمیان میں کوئی تشہد نہ بیٹھتے سوائے آٹھویں کے ۔ آپ ﷺ اس آٹھویں رکعت میں بیٹھتے مگر سلام نہ پھیرتے ، بلکہ کھڑے ہو کر ایک رکعت وتر پڑھتے ۔ پھر سلام کہتے ، ایک سلام ، اس میں آپ کی آواز بہت اونچی ہوتی حتی کہ ہمیں جگا دیتے ۔ پھر مذکورہ روایت کے ہم معنی بیان کیا ۔