Book - حدیث 1343

كِتَابُ التَّطَوُّعِ بَابُ فِي صَلَاةِ اللَّيْلِ صحیح حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، عَنْ سَعِيدٍ، عَنْ قَتَادَةَ بِإِسْنَادِهِ نَحْوَهُ، قَالَ: يُصَلِّي ثَمَانِيَ رَكَعَاتٍ لَا يَجْلِسُ فِيهِنَّ إِلَّا عِنْدَ الثَّامِنَةِ، فَيَجْلِسُ فَيَذْكُرُ اللَّهَ عَزَّ وَجَلَّ، ثُمَّ يَدْعُو ثُمَّ يُسَلِّمُ تَسْلِيمًا يُسْمِعُنَا، ثُمَّ يُصَلِّي رَكْعَتَيْنِ وَهُوَ جَالِسٌ بَعْدَمَا يُسَلِّمُ، ثُمَّ يُصَلِّي رَكْعَةً فَتِلْكَ إِحْدَى عَشْرَةَ رَكْعَةً يَا بُنَيَّ، فَلَمَّا أَسَنَّ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، وَأَخَذَ اللَّحْمَ,أَوْتَرَ بِسَبْعٍ وَصَلَّى رَكْعَتَيْنِ وَهُوَ جَالِسٌ بَعْدَمَا يُسَلِّمُ... بِمَعْنَاهُ، إِلَى: مُشَافَهَةً.

ترجمہ Book - حدیث 1343

کتاب: نوافل اور سنتوں کے احکام ومسائل باب: رات کی نماز ( تہجد ) کا بیان سعید نے قتادہ سے اپنی سند سے اسی مذکورہ حدیث کی مانند روایت کیا ۔ کہا : آپ ﷺ آٹھ رکعات پڑھتے ان میں کسی میں نہ بیٹھتے ، صرف آٹھویں رکعت پر بیٹھتے ، اللہ کا ذکر اور دعا کرتے پھر سلام پھیرتے اس طرح کہ ہمیں سنواتے ( یعنی بلند آواز سے سلام کہتے ) پھر سلام کے بعد بیٹھے بیٹھے دو رکعتیں پڑھتے ، پھر ایک رکعت پڑھتے ۔ بیٹے ! یہ کل گیارہ رکعتیں ہوتیں ۔ پھر جب رسول اللہ ﷺ بڑی عمر کے ہو گئے اور کچھ فربہ بھی تو آپ سات رکعت وتر پڑھنے لگے اور سلام کے بعد بیٹھے بیٹھے دو رکعتیں پڑھتے ۔ سابقہ حدیث کے ہم معنی ” بالمشافہ سنتا “ تک بیان کیا ۔ فائد: تہجد میں آٹھ رکعت اکٹھی کی بھی نیت کی جاسکتی ہے۔ اور درمیان میں کوئی تشہد نہیں ہوگا۔ اور سلام اونچی آواز سے کہنا بھی مباح و مسنون ہے۔