Book - حدیث 1147

کِتَابُ تَفْرِيعِ أَبْوَابِ الْجُمُعَةِ بَابُ تَرْكِ الْأَذَانِ فِي الْعِيدِ صحیح حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا يَحْيَى عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ عَنِ الْحَسَنِ بْنِ مُسْلِمٍ، عَنْ طَاوُسٍ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ صَلَّى الْعِيدَ بِلَا أَذَانٍ وَلَا إِقَامَةٍ، وَأَبَا بَكْرٍ وَعُمَرَ أَوْ عُثْمَانَ. شَكَّ يَحْيَى.

ترجمہ Book - حدیث 1147

کتاب: جمعۃ المبارک کے احکام ومسائل باب: عید میں اذان نہیں سیدنا ابن عباس ؓ راوی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے عید ( کی نماز ) اذان اور اقامت کے بغیر پڑھائی ۔ اور ( ایسے ہی ) ابوبکر و عمر و عثمان ؓ نے بھی ۔ یحییٰ کو شک ہوا ہے ۔ یہ ر وایت معنا صحیح ہے۔اسی لئے شیخ البانی ؒ نےاس کی تصیح کی ہے۔