Book - حدیث 1036

کِتَابُ تَفْرِيعِ اسْتِفْتَاحِ الصَّلَاةِ بَابُ مَنْ نَسِيَ أَنْ يَتَشَهَّدَ وَهُوَ جَالِسٌ صحیح حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ عَمْرٍو، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الْوَلِيدِ، عَنْ سُفْيَانَ، عَنْ جَابِرٍ يَعْنِي الْجُعْفِيَّ، قَالَ: حَدَّثَنَا الْمُغِيرَةُ بْنُ شُبَيْلٍ الْأَحْمَسِيُّ، عَنْ قَيْسِ بْنِ أَبِي حَازِمٍ عَنِ الْمُغِيرَةِ بْنِ شُعْبَةَ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: >إِذَا قَامَ الْإِمَامُ فِي الرَّكْعَتَيْنِ, فَإِنْ ذَكَرَ قَبْلَ أَنْ يَسْتَوِيَ قَائِمًا فَلْيَجْلِسْ، فَإِنِ اسْتَوَى قَائِمًا فَلَا يَجْلِسْ، وَيَسْجُدْ سَجْدَتَيِ السَّهْوِ<. قَالَ أَبو دَاود: وَلَيْسَ فِي كِتَابِي، عَنْ جَابِرٍ الْجُعْفِيِّ إِلَّا هَذَا الْحَدِيثُ.

ترجمہ Book - حدیث 1036

کتاب: نماز شروع کرنے کے احکام ومسائل باب: جو شخص بیٹھے ہوئے تشہد پڑھنا بھول جائے ؟ سیدنا مغیرہ بن شعبہ ؓ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ” جب امام دو رکعتوں پر کھڑا ہو جائے اور صحیح سیدھا کھڑا ہونے سے پہلے ہی اسے یاد آ جائے تو چاہیئے کہ بیٹھ جائے ( اور تشہد پڑھے ) اور اگر سیدھا کھڑا ہو جائے تو نہ بیٹھے بلکہ سہو کے دو سجدے کرے ۔ “ امام ابوداؤد ؓ فرماتے ہیں کہ میری کتاب میں جابر جعفی سے صرف یہی حدیث روایت ہوئی ہے ۔ اس حدیث کو شیخ البانی صحیح شمار کرتے ہیں۔ جبکہ دیگر عام محدثین جابر کی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی وجہ سے اسے ضعیف کہتے ہیں۔ یہ اپنے رافضی عقائد کی بنار پر ناقابل حجت ہے۔(عون المبعود ۔منذری)تاہم اگلی حدیث سے اس میں بیان کردہ مسئلہ ثابت ہے۔شوافع وغیرہ کا مذہب ہے کہ تشہد پڑھنا واجب ہے۔ اگر امام اور ایسے ہی منفرد بھی خاموش بیٹھا رہا اور تشہد نہ پڑھے۔ تو یاد آنے پر سیدھا کھڑے ہونے سے پہلے قعدے میں لوٹ جائے اور اور تشہد پڑھے ۔یہی حق ہے۔اور اگر سیدھا کھڑا ہوجائے تو کھرا رہے۔اور آخر میں سلام سے پہلے دو سجدے کرے۔