کتاب: زکوۃ کے مسائل - صفحہ 29
فَرْضِیَّـــــــــــــۃُ الزَّکَاۃِ زکاۃ کی فرضیت مسئلہ نمبر:4 زکاۃ ادا کرنا اسلام کے پانچ بنیادی فرائض میں سے ایک فرض ہے۔ عَنِ ابْنِ عُمَرَ رَضِیَ اللّٰہُ عَنْہُمَا قَالَ : قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم ((بُنِیَ الْاِسْلاَمُ عَلٰی خَمْسٍ شَہَادَۃِ اَنْ لاَّ اِلٰہَ اِلاَّ اللّٰہُ وَ اَنَّ مُحَمَّدًا رَسُوْلُ اللّٰہِ وَ اِقَامِ الصَّلاَۃِ وَ اِیْتَائِ الزَّکَاۃِ وَ الْحَجِّ وَ صَوْمِ رَمَضَانَ )) رَوَاہُ الْبُخَارِیُّ[1] حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر ہے اس بات کی شہادت دیناکہ اللہ کے سواکوئی معبود نہیں،اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالیٰ کے رسول ہیں نماز قائم کرنا زکاۃ ادا کرنا حج اور…مضان کے روزے رکھنا۔‘‘ اسے بخاری نے روایت کیا ہے۔ مسئلہ نمبر:5 زکاۃادا کرنے کے عہد پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیعت لی۔ قَالَ جَرِیْرُ بْنُ عَبْدِاللّٰہِ بَایَعْتُ النَّبِیَّ صلی اللہ علیہ وسلم عَلٰی اِقَامِ الصَّلاَۃِ وَاِیْتَائِ الزَّکَاۃِ وَالنُّصْحِ لِکُلِّ مُسْلِمٍ ۔رَوَاہُ الْبُخَارِیُّ[2] حضرت جریر بن عبداللہ ؓ کہتے ہیں ’’میں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے نماز قائم کرنے،زکاۃدینے اورہر مسلمان کی خیر خواہی کرنے پر بیعت کی۔‘‘اسے بخاری نے روایت کیا ہے مسئلہ نمبر:6 زکاۃادا نہ کرنے والوں کے خلاف جہاد کرنا فرض ہے۔ مسئلہ نمبر:7 زکاۃایک فرض عبادت ہے،اس کی جگہ کوئی صدقہ خیرات یا ٹیکس وغیرہ ادا کرنے سے زکاۃکا فرض ساقط نہیں ہوتا۔ عَنْ اَبِیْ ہُرَیْرَۃَ رضی اللہ عنہ قَالَ لَمَّا تُوُفِّیَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وسلم وَکَانَ اَبُوْبَکْرٍ رضی اللہ عنہ وَکَفَرَ مَنْ کَفَرَ [1] صحیح بخاری ، کتاب الایمان باب بنی الاسلام علی خمس [2] صحیح بخاری کتاب الزکاۃ باب البیعۃ علی ایتاء الزکاۃ