کتاب: زاد الخطیب (جلد1) - صفحہ 431
’’ جو مسلمان بندہ ہر دن اللہ تعالیٰ کی رضا کیلئے بارہ رکعات نفل (جو کہ فرض نہیں ) ادا کرے تو اللہ تعالیٰ اس کیلئے جنت میں ایک گھر بنا دیتا ہے۔یا اس کیلئے جنت میں ایک گھر بنا دیا جاتا ہے ۔‘‘ یہ حدیث بیان کرکے حضرت ام حبیبہ رضی اللہ عنہا نے فرمایا : (مَاتَرَکْتُہُنَّ مُنْذُ سَمِعْتُہُنَّ مِنْ رَّسُوْلِ اللّٰہِ صلي اللّٰه عليه وسلم ) [1] یعنی ’’ میں نے جب سے ان بارہ رکعات کے بارے میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ حدیث سنی ہے تب سے انہیں کبھی نہیں چھوڑا ۔‘‘ ان بارہ رکعات کی تفصیل سنن الترمذی میں موجود ہے ۔ چنانچہ حضرت ام حبیبہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : (( مَنْ صَلّٰی فِیْ یَوْمٍ وَّلَیْلَۃٍ ثِنْتَیْ عَشْرَۃَ رَکْعَۃً بُنِیَ لَہُ بَیْتٌ فِیْ الْجَنَّۃِ:أَرْبَعًا قَبْلَ الظُّہْرِ،وَرَکْعَتَیْنِ بَعْدَہَا،وَرَکْعَتَیْنِ بَعْدَ الْمَغْرِبِ،وَرَکْعَتَیْنِ بَعْدَ الْعِشَائِ ، وَرَکْعَتَیْنِ قَبْلَ الْفَجْرِ) [2] ’’ جو شخص دن اور رات میں بارہ رکعات پڑھتا ہے اس کیلئے جنت میں ایک گھر بنا دیا جاتا ہے : ظہر سے پہلے چار اور اس کے بعد دو ۔ مغرب کے بعد دو ، عشاء کے بعد دو اور فجر سے پہلے دو رکعا ت ۔‘‘ نیزحضرت ام حبیبہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : (( مَنْ حَافَظَ عَلیٰ أَرْبَعِ رَکْعَاتٍ قَبْلَ الظُّہْرِ،وَأَرْبَعٍ بَعْدَہَا حَرَّمَہُ اللّٰہُ عَلَی النَّارِ[3])) ’’جوآدمی ظہر سے پہلے چار رکعات اور اس کے بعد بھی چار رکعات پر ہمیشگی کرتا رہے اسے اللہ تعالیٰ جہنم کی آگ پر حرام کردیتا ہے۔ ‘‘ اسی طرح حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : (( رَحِمَ اللّٰہُ امْرَئً ا صَلّٰی قَبْلَ الْعَصْرِ أَرْبَعًا) [4] ’’ اللہ تعالیٰ اس شخص پر رحم فرمائے جو عصر سے پہلے چار رکعات ادا کرتا رہے ۔‘‘ [1] صحیح مسلم:728 [2] سنن الترمذی:415۔ وصححہ الألبانی [3] أحمد فی المسند:326/6،سنن أبيداؤد:1269،سنن الترمذی:427وقال:حدیث حسن،سنن النسائی:1814،سنن ابن ماجہ:1160، وصححہ الألبانی [4] سنن أبيداؤد:1271، سنن الترمذی:430۔ وصححہ الألبانی