کتاب: وسیلہ کی شرعی حیثیت - صفحہ 255
تنبیہ: اس کی دوسر ی سند احمد بن مروان دینوری کی کتاب المجالسۃ وجواہر العلم (758) میں ہے۔ یہ سند بھی باطل ہے ۔ 1.عامر بن عبد اللہ زبیری کی توثیق نہیں ملی۔ 2.مصعب بن ثابت کو جمہور محدثین نے ’’ضعیف‘‘ کہا ہے۔ امام احمد بن حنبل ، امام یحییٰ بن معین، امام ابوحاتم رازی ، امام ابوزرعہ رازی، امام نسائی ، حافظ ابن سعد ، حافظ جوزجانی، امام دارقطنی رحمۃاللہ علیہم وغیرہم نے ’’ضعیف‘‘ قرار دیا ہے۔ حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے ’’ لَیِّن الحدیث‘‘ کہا ہے۔ (تقریب التّھذیب : 6686) حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں : لَیِّنٌ لِغَلَطِہٖ ۔’’اپنی غلطیوں کی بنا پر کمزور ہے۔‘‘(الکاشف : 3/130) 3.اس میں ایک اور علت بھی ہے۔ دلیل نمبر ۴۵ کعب احبار رحمہ اللہ سے روایت ہے: إِنَّ بَنِي إِسْرَائِیلَ کَانُوْا إِذَا قُحِطُوا، اسْتَسْقَوْا بِأَھْلِ بَیْتِ نَبِیِّھِمْ ۔ ’’ بنی اسرائیل پر قحط پڑتا، تو اہل بیت نبی کے وسیلے بارش طلب کرتے تھے۔‘‘ (عُمدۃ القاري للعیني : 7/32) تبصرہ: بے سند جھوٹ ہے، دوسرے یہ کہ اس جھوٹی روایت کا مطلب بھی یہ ہے کہ ان