کتاب: تعزیہ داری علمائے امت کی نظر میں - صفحہ 56