کتاب: سلسلہ فتاوی علمائے اہل حدیث 3 مجموعہ فتاویٰ محدث العصر علامہ محمد عبد الرحمن مبارکپوری - صفحہ 279
جواب:بغرضِ ثواب رسانی بحق موتیٰ فقیروں اور مسکینوں کو کھانا کھلانا درست ہے۔بخاری میں ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ سعد بن عبادہ کی ماں وفات پا گئیں اور وہ موجود نہ تھے،پس نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آئے اور کہا:یا رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم ! میری ماں وفات پا گئیں اور میں حاضر نہ تھا۔اگر میں ان کی طرف سے صدقہ کروں تو کیا ان کو نفع ہو گا؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:ہاں۔[1] انتھیٰ بقدر الحاجۃ۔واللّٰه أعلم بالصواب۔ کتبہ:أبو الفیاض محمد عبدالقادر۔أبو العلیٰ محمد عبد الرحمن المبارکفوري۔[2] [1] صحیح البخاري،رقم الحدیث (۲۶۰۵) [2] مجموعہ فتاویٰ غازي پوری (ص:۳۳۲)