کتاب: سلسلہ فتاوی علمائے اہل حدیث 3 مجموعہ فتاویٰ محدث العصر علامہ محمد عبد الرحمن مبارکپوری - صفحہ 121
کتاب الطھارۃ اگر کتا کنویں میں گر پڑے تو اس کا کیا حکم ہے؟ سوال:چہ فرما یند علمائے دین درین مسئلہ کہ اگر سگ در چاہ افتادچہ حکم است؟ [اگر کتا کنویں میں گر پڑے تو اس کا کیا حکم ہے؟] سوال:حکم چاہ مذکورہ آن است کہ اگر آب آن چاہ از افتادنِ سگ متغیر نشدہ است،بلکہ برحال خود است،آن چاہ طاہر است،و اگر بو یا مزہ یا رنگ آن متغیر شدہ است نجس است۔ ’’عن أبي سعید الخدري رضی اللّٰه عنہ قال قال رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم:(( إِنَّ الْمَائَ طَھُوْرٌ لاَ یُنَجِّسُہُ شَیْیٌٔ )) أخرجہ الثلاثۃ،وصححہ أحمد،کذا في بلوغ المرام۔[1] وفیہ أیضاً عن أبي أمامۃ الباھلي رضی اللّٰه عنہ قال:قال رسول اللّٰه صلی اللّٰه علیہ وسلم:(( إِنَّ الْمَائَ طَھُوْرٌ لاَ یُنَجِّسِہُ شَیْیٌٔ إِلَّا مَا غَلَبَ عَلیٰ رِیْحِہِ وَطَعْمِہِ وَلَوْنِہِ )) أخرجہ ابن ماجہ،وضعفہ أبو حاتم،[2] وللبیھقي:(( اَلْمَائُ طَاھِرٌ إِلَّا أَنْ تَغَیَّرَ رِیْحُہُ أَوْ طَعْمُہُ أَوْ لَوْنُہُ بِنَجَاسَۃٍ تَحْدُثُ فِیْہِ )) [3] انتھیٰ و آنکہ در آخر حدیث ثانی گفتہ ’’وضعفہ أبو حاتم‘‘ این سخن مضر نیست زیراکہ جز اول این حدیث یعنی (( إن الماء لا ینجسہ شییٔ )) بطریق دیگر مروی شدہ است و آن صحیح است،چنانکہ بطریق ابو سعید گذشت،و امام احمد تصحیح آن کردہ،باقی ماند جز اخیر یعنی (( إلا ما غلب علی ریحہ أو طعمہ أو لونہ )) پس بر عمل آن اجماع است،پس برین تقدیر ہمین اجماع دلیل جزء اخیر از دعوی صدر خواہد شد،چنانچہ در سبل السلام شرع بلوغ المرام مرقوم است کہ ’’قال ابن المنذر؟ أجمع العلماء علیٰ أن الماء القلیل والکثیر إذا وقعت فیہ نجاسۃ فغیرت لہ طعما أو لونا أو ریحا فھو نجس فالإجماع ھو الدلیل علیٰ نجاسۃ ما تغیر أحد أوصافہ لا ھذہ الزیادۃ‘‘[4] انتھیٰ آرے ہر آبے کہ کم از مقدار قلتین است۔بمجرد افتادن نجاست نجس خواہد شد،خواہ رنگ یا بو یا مزہ آن متغیر [1] سنن أبي داود،رقم الحدیث (۶۶) سنن الترمذي،رقم الحدیث (۶۶) سنن النسائي،رقم الحدیث (۱۷۴) بلوغ المرام (۲) [2] سنن ابن ماجہ،رقم الحدیث (۵۲) اس کی سند میں رشدین بن سعد ضعیف ہے۔العلل لابن أبي حاتم (۱/ ۴۴) [3] سنن البیھقي (۱/ ۱۵۹) اس کی سند میں ’’بقیہ بن ولید‘‘ مدلس ہے۔ [4] سبل السلام (۱/ ۴)