کتاب: سعادۃ الدارین ترجمہ تعلیقات سلفیہ برتفسیر جلالین - صفحہ 77
طاغوت میں داخل ہے۔(ص) ﴿أَفَأَمِنَ الَّذِیْنَ مَکَرُوا السَّیِّئَاتِ۔۔﴾ کما ذکر فی الأنفال(۵۵۶ /۲۱۹) ٭ دیکھئے سورہ انفال آیت نمبر(۳۰) ﴿أَوَ لَمْ یَرَوْا إِلَی مَا خَلَقَ اللّٰهُ مِن شَیْء ٍ یَتَفَیَّأُ۔۔﴾ (۵۵۷ /۲۲۰) ٭ ابو عمرو نے(تتفیأ)تاء فوقیہ سے پڑھاہے،انہوں نے اس بات کااعتبارکیاہے کہ اس کافاعل(ظلالہ)جمع ہے جومؤنث کے حکم میں ہوتاہے۔یعقوب کی قراء ت بھی یہی ہے۔بقیہ قراء نے(ظلالہ)کے مؤنث مجازی ہونے کی وجہ سے(یتفیأ)یاء تحتیہ کے ساتھ پڑھاہے،جیسا کہ(تفسیر)سمین میں ہے۔ ﴿یَخَافُونَ رَبَّہُم مِّن فَوْقِہِمْ۔۔۔﴾ حال من ’’ھم‘‘(۵۵۷ /۲۲۰) ٭ حاشیۃ الجمل میں ہے کہ درست یہ ہے کہ یہ(ربھم)سے حال ہے۔ ﴿یَتَوَارَی مِنَ الْقَوْمِ۔۔۔۔۔۔أَلاَ سَاء مَا یَحْکُمُون﴾ ۔۔۔البنات اللاتی ھن۔۔۔۔ (۵۵۹ /۱۲۱) ٭ ایک نسخہ میں ھن کی جگہ ’’ھی‘‘ ہے۔ ﴿یَخْرُجُ مِن بُطُونِہَا شَرَابٌ مُّخْتَلِفٌ۔۔۔﴾ وقد أمر بہ صلی اللّٰه علیہ وسلم من استطلق بطنہ،رواہ الشیخان ٭ بخاری(۵۷۱۶)مسلم(۲۲۱۷)(۵۶۱ /۲۲۲) ﴿الَّذِیْنَ کَفَرُواْ وَصَدُّواْ عَن سَبِیْلِ اللّٰهِ زِدْنَاہُمْ عَذَاباً۔۔۔۔﴾ قال ابن مسعود:عقارب أنیابھا کالنخل الطوال۔(۵۶۶ /۲۲۴) ٭ مستدرک حاکم(۳۳۵۷-۲ /۳۵۶) ﴿إِنَّ اللّٰهَ یَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالإِحْسَانِ۔۔۔﴾