کتاب: سعادۃ الدارین ترجمہ تعلیقات سلفیہ برتفسیر جلالین - صفحہ 62
﴿وَزَادَکُمْ فِیْ الْخَلْقِ بَصْطَۃً﴾ وکان طویلہم مائۃ ذراع وقصیرہم ستین(۳۳۰ /۱۳۵) ٭ یہ مبالغہ ہے،ایسا ثابت نہیں ہے،یہ خرافات سے زیادہ قریب ہے۔(ص) ﴿قَالَ فِرْعَوْنُ آمَنتُم بِہِ﴾ بتحقیق الہمزتین وإبدال الثانیہ ألفا(۳۴۲ /۱۳۹) l حاشیۃ الجمل میں ہے کہ ’’الثانیۃ‘‘ کی جگہ ’’الثالثۃ‘‘ درست ہے،یہ تیسرا ہمزہ فعل کا فا کلمہ ہے۔ ﴿فَلَمَّا تَجَلَّی رَبُّہُ لِلْجَبَلِ﴾ کما في حدیث صححہ الحاکم(۳۴۷ /۱۴۰) ٭ مستدرک حاکم(۲ /۳۲۰) ﴿وَالَّذِیْنَ کَذَّبُواْ بِآیَاتِنَا وَلِقَاء الآخِرَۃِ حَبِطَتْ أَعْمَالُہُمْ﴾ فلا ثواب لہم لعدم شرطہ(۳۴۹ /۱۴۱) ٭ اعمال کے مقبول ہونے کی شرط اسلام ہے۔اسلام کے بغیر کوئی عمل مقبول نہیں۔ ﴿فَلَمَّا عَتَوْاْ عَن مَّا نُہُواْ عَنْہُ۔۔۔خَاسِئِیْن﴾ وروی الحاکم عن ابن عباس أنہ رجع إلیہ وأعجبہ(۳۵۶ /۱۴۳) ٭ مستدرک حاکم(۳۲۵۴،۲ /۳۵۲)تلخیص میں اس روایت کو صحیح کہا ہے۔ ﴿وَمِمَّنْ خَلَقْنَا أُمَّۃٌ۔۔﴾ ہم أمۃ محمد صلی اللّٰه علیہ وسلم کما في حدیث۔(۳۶۰ /۱۴۵) ٭ تفسیر طبری(۱۵۴۶۹،۱۵۴۷۱،سورہ اعراف:۱۸۱) ﴿فَلَمَّا آتَاہُمَا صَالِحاً جَعَلاَ لَہُ شُرَکَاء۔۔۔۔۔﴾ وروي سمرۃ۔۔۔۔من وحي الشیطان وأمرہ۔(۳۶۳ /۱۴۶)